Zafar Iqbal

Zafar Iqbal born 27 September 1932 or 1933) is an Urdu poet based in Okara, Pakistan.

Yuun bhi hota hai ki yak dam koi acha lag jaye

Baat kuchh bhi na ho aur dil mein tamasha lag jaye

 

Ham savalat ka hal soch rahe hon abhi tak

Aur mathe pe mohabbat ka natija lag jaye

 

Abhi divar uthayi bhi na ho dil ki taraf

Lekin is mein koi dar koi daricha lag jaye

 

Kya sitam hai ki vahi duur raha ho tum se

Aur usi shaḳhs pe ilzam tumhara lag jaye

 

Puuri awaz se ik roz pukarun tujh ko

Aur phir meri zaban par tira taala lag jaye

 

Aur to is ke sawa kuchh nahin imkan ki ab

Mere dariya mein kahin tera kinara lag jaye

Main ne aur dil ne isi baab mein socha hai ki ham

Kaam kuchh bhī na kareñ koī vazīfa lag jaye

Kya tamasha hai ki baaqi ho samundar ka safar

Aur sāhil se kisī roz safīna lag jaye

 

Ye bhī mumkin hai ki is kar-gah-e-dil mein ‘Zafar’

Kaam koī kare aur naam kisī kā lag jaye

Khamoshi Achi Nahi Inkaar Hona Chahiye
Ye Tamasha Ab Sar E Bazar Hona Chahiye

Khuwab Ki Taqbeer Par Asrar Ha Jin Ko Abhi
Phele In Ko Khuwab Se Bidaar Hona Chahiye

Toob Kar Marna Bhi Asloob Mohabat Ho To Ho
Wo Jo Dariya Hai Tu Os Ko Paar Hona Chahiye

Ab Wohi Karne Lagy Dedar Ki Baat
Wo Jo Kabhi Khety Thy Bass Didar Hona Chahiye

Dosti Ke Naam Par Kijye Na Kyu Kar Dushmani
Kuch Na Kuch Akhir Tareeke Kaar Hona Chahiye

Jhoot Bola Ha Tu Kaim Bhi Raho Is Par Zafar
Aadmi Ko Sahib E Kirdaar Hona Chahiye

یوں بھی ہوتا ہے کہ یک دم کوئی اچھا لگ جائے
بات کچھ بھی نہ ہو اور دل میں تماشا لگ جائے
 
ہم سوالات کا حل سوچ رہے ہوں ابھی تک
اور ماتھے پہ محبت کا نتیجہ لگ جائے
 
ابھی دیوار اٹھائی بھی نہ ہو دل کی طرف
لیکن اس میں کوئی در کوئی دریچہ لگ جائے
 
کیا ستم ہے کہ وہی دور رہا ہو تم سے
اور اسی شخص پہ الزام تمہارا لگ جائے
 
پوری آواز سے اک روز پکاروں تجھ کو
اور پھر میری زباں پر ترا تالا لگ جائے
 
اور تو اس کے سوا کچھ نہیں امکان کہ اب
میرے دریا میں کہیں تیرا کنارہ لگ جائے
 
میں نے اور دل نے اسی باب میں سوچا ہے کہ ہم
کام کچھ بھی نہ کریں کوئی وظیفہ لگ جائے
 
کیا تماشا ہے کہ باقی ہو سمندر کا سفر
اور ساحل سے کسی روز سفینہ لگ جائے
 
یہ بھی ممکن ہے کہ اس کار گہہ دل میں ظفرؔ
کام کوئی کرے اور نام کسی کا لگ جائے

خامشی اچھی نہیں انکار ہونا چاہئے

یہ تماشا اب سر بازار ہونا چاہئے
 
خواب کی تعبیر پر اصرار ہے جن کو ابھی
پہلے ان کو خواب سے بیدار ہونا چاہئے
 
ڈوب کر مرنا بھی اسلوب محبت ہو تو ہو
وہ جو دریا ہے تو اس کو پار ہونا چاہئے
 
اب وہی کرنے لگے دیدار سے آگے کی بات
جو کبھی کہتے تھے بس دیدار ہونا چاہئے
 
دوستی کے نام پر کیجے نہ کیونکر دشمنی
کچھ نہ کچھ آخر طریق کار ہونا چاہئے
 
جھوٹ بولا ہے تو قائم بھی رہو اس پر ظفرؔ
آدمی کو صاحب کردار ہونا چاہئے