Parveen Shakir

Parveen Shakir  (24 November 1952 – 26 December 1994) was a Pakistani poet, teacher and a civil servant of the Government of Pakistan.

Woh To Khushboo Hai, Hawaon Main Bikhar Jayega
Masala To Phool Ka Hai Phool Kidhar Jayega

Hum Tou Samjhe The Ke Ik Zakhm Hai Bhar Jaae Ga
Kya Khabar The Keh Rag E Jaan Main Utar Jaae Ga

Woh Hawaon Ki Tarah Khana E Bajaan Phirta Hai
Ik Jhonka Hay Jo Aye Ga, Guzar Jaae Ga

Woh Jab Aye Ga To Phir Uski Rafaqat Ke Liye
Mousam E Gul Mere Angan Main Theher Jaae Ga

Aakhrish Woh Bhi Kahin Rait Pe Bethe Honge
Tera Yeh Pyar Bhi Dariya Hain Utar Jayega

Mujhko Tehzeeb Ke Barzakh Ka Bana Diya Waris
Jurm Yeh Bhi Mere Ajdaad Ke Sar Jaae Ga

Ku-ba-ku phail gai baat shanasai ki

Us ne ḳhushbu ki tarah meri pazirai ki

Kaise kah dun ki mujhe chhor diya hai us ne

Baat to sach hai magar baat hai rusvai ki

Wo kahin bhi gaya lauTa to mire paas aaya

Bas yahi baat hai achchhi mire harjai ki

Tera pahlu tire dil ki tarah abad rahe

Tujh pe guzre na qayamat shab-e-tanhai ki

Us ne jalti hui peshani pe jab haath rakha

Ruuh tak aa gai tasir masihai ki

Ab bhi barsat ki raton men badan TuTta hai

Jaag uThti hain ajab ḳhvahishen angrai ki

Tamam Raat Mere Ghar Ka Aik Dar Khula Raha
Main Raah Dekhti Rahi, Woh Rasta Badal Gaya
 
Woh Sheher Hai Ke Jadugarniyon Ka Koi Des
Wahan To Jo Geya Kabhi Laut Kar Na Aasaka
 
Main Wajah-E-Tark-E-Dosti Ko Sun Ke Muskurayi To
Woh Chaunk Utha, Ajab Nazar Se Mujh Ko Dekhne Laga
 
Bichar Ke Mujh Se, Halaq Ko Aziz Ho Geya Hai Tu
Mujhe To Jo Koi Mila, Tujhi Ko Puchta Raha
 
Woh Dilnawaaz Lamhe Bhi Gayi Ruton Mein Aye Jab
Main Khawb Dekhti Rahi, Woh Mujh Ko Dekhta Raha
 
Woh Jis Ki Ek Pal Ki Be’rukhi Bhi Dil Ko Haar Thi
Usey Khud Apne Hath Se Likha Hai, Mujhe Bhool Ja
 
Damak Raha Hai Aik Chaand Se Jabee’n Pe Ab Talak
Gurez’paa Mohabton Ka Koi Pal Theher Gaya

Bahut roya vo ham ko yaad kar ke

Hamari zindagi barbad kar ke

Palat kar phir yahin aa jaenge ham

Vo dekhe to hamen azad kar ke

Rihai ki koi surat nahin hai

Magar haan minnat-e-sayyad kar ke

Badan mera chhua tha us ne lekin

Gaya hai ruuh ko abad kar ke

Har aamir tuul dena chahta hai

Muqarrar zulm ki miad kar ke

Qadmon Mein Bhi Takan Thi Ghar Bhi Qarib Tha
Par Kiya Karen Ki Ab Ke Safar Hi Ajeeb Tha

Nikle Agar Tou Chand Dariche Mein Ruk Bhi Jaye
Is Shahr E Be Charagh Mein Kis Ka Nasib Tha

Andhi Ne Un Ruton Ko Bhi Be Kar Kar Diya
Jin Ka Kabhi Huma Sa Parinda Nasib Tha

Kuch Apne Ap Se Hi Use Kashmakash Na Thi
Mujh Mein Bhi Koi Shakhs Usi Ka Raqib Tha

Pucha Kisi Ne Mol To Hairan Rah Gya
Apni Nigah Mein Koi Kitna Gharib Tha

Maqtal Se Aane Wali Hawa Ko Bhi Kab Mila
Aisa Koi Daricha Ki Jo Be Salib Tha

وہ تو خوش بو ہے ہواؤں میں بکھر جائے گا 
مسئلہ پھول کا ہے پھول کدھر جائے گا
 
ہم تو سمجھے تھے کہ اک زخم ہے بھر جائے گا 
کیا خبر تھی کہ رگ جاں میں اتر جائے گا
 
وہ ہواؤں کی طرح خانہ بجاں پھرتا ہے 
ایک جھونکا ہے جو آئے گا گزر جائے گا
 
وہ جب آئے گا تو پھر اس کی رفاقت کے لیے 
موسم گل مرے آنگن میں ٹھہر جائے گا
 
آخرش وہ بھی کہیں ریت پہ بیٹھی ہوگی 
تیرا یہ پیار بھی دریا ہے اتر جائے گا
 
مجھ کو تہذیب کے برزخ کا بنایا وارث 
جرم یہ بھی مرے اجداد کے سر جائے گا

کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی
اس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اس نے
بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو مرے پاس آیا
بس یہی بات ہے اچھی مرے ہرجائی کی

تیرا پہلو ترے دل کی طرح آباد رہے
تجھ پہ گزرے نہ قیامت شب تنہائی کی

اس نے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا
روح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے
جاگ اٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

تمام رات , میرے گھر کا ایک در کُھلا رھا
میں راہ دیکھتی رھی ، وہ راستہ بدل گیا
 
وہ شہر ھے کہ جادوگرنیوں کا کوئی دیس ھے
وہاں تو جوگیا، کبھی بھی لوٹ کر نہ آ سکا
 
میں وجہِ ترکِ دوستی کو سُن کر مُسکرائی تو
وہ چونک اُٹھا ، عجب نظر سے مجھ کو دیکھنے لگا
 
بچھڑ کے مُجھ سے ، خلق کو عزیز ھوگیا ھے تُو
مجھے تو جو کوئی ملا ، تجھی کو پُوچھتا رھا
 
وہ دلنواز لمحے بھی گئی رُتوں میں آئے ، جب
میں خواب دیکھتی رھی ، وہ مجھ کو دیکھتا رھا
 
وہ جس کی ایک پل کی بے رُخی بھی ، دل کو بار تھی
اُسے خود اپنے ھاتھ سے لکھا ھے ، مجھ کو بُھول جا
 
دمک رھا ھے ایک چاند سا جبیں پہ اب تلک
گریزپا محبتوں کا کوئی پل ٹھہر گیا

بہت رویا وہ ہم کو یاد کر کے
ہماری زندگی برباد کر کے

پلٹ کر پھر یہیں آ جائیں گے ہم
وہ دیکھے تو ہمیں آزاد کر کے

رہائی کی کوئی صورت نہیں ہے
مگر ہاں منت صیاد کر کے

بدن میرا چھوا تھا اس نے لیکن
گیا ہے روح کو آباد کر کے

ہر آمر طول دینا چاہتا ہے
مقرر ظلم کی میعاد کر کے

ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺗﮑﺎﻥ ﺗﮭﯽ ﮔﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻗﺮﯾﺐ ﺗﮭﺎ
ﭘﺮ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺳﻔﺮ ﮨﯽ ﻋﺠﯿﺐ ﺗﮭﺎ
 
ﻧﮑﻠﮯ ﺍﮔﺮ ﺗﻮ ﭼﺎﻧﺪ ﺩﺭﯾﭽﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﮎ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﺋﮯ
ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﺑﮯ ﭼﺮﺍﻍ ﻣﯿﮟ ﮐﺲ ﮐﺎ ﻧﺼﯿﺐ ﺗﮭﺎ
 
ﺁﻧﺪﮬﯽ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﮯ ﮐﺎﺭ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ
ﺟﻦ ﮐﺎ ﮐﺒﮭﯽ ﮨﻤﺎ ﺳﺎ ﭘﺮﻧﺪﮦ ﻧﺼﯿﺐ ﺗﮭﺎ
 
ﮐﭽﮫ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺍﺳﮯ ﮐﺸﻤﮑﺶ ﻧﮧ ﺗﮭﯽ
ﻣﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺨﺺ ﺍﺳﯽ ﮐﺎ ﺭﻗﯿﺐ ﺗﮭﺎ
 
ﭘﻮﭼﮭﺎ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﻣﻮﻝ ﺗﻮ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ
ﺍﭘﻨﯽ ﻧﮕﺎﮦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﮐﺘﻨﺎ ﻏﺮﯾﺐ ﺗﮭﺎ
 
ﻣﻘﺘﻞ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮨﻮﺍ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﮐﺐ ﻣﻼ
ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﺭﯾﭽﮧ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺑﮯ ﺻﻠﯿﺐ ﺗﮭﺎ