Nasir Kazmi

Hafiz Hassan Ali (8 December 1925 – 2 March 1972)‎ was an Urdu poet from Pakistan.

Dil DhaRakne Ka Sabab Yaad Aaya
Wo Teri Yaad Thi Ab Yaad Aaya

Aaj Mushkil Tha Sambhalna Ay Dost
TU Musibat Main Ajab Yaad Aaya

Din Guzra Tha Bari Mushkil Se
Phir Tera Waada-e-Shab Yaad Aaya

Tera Bhula Hua Paimaan-e-Wafa
Mar Rahenge Gar Ab Yaad Aaya

Phir Loog Nazar Se Guzre
Phir Koi Sheher-e-Tarab Yaad Aaya

Haal-e-Dil Hum Bhi Sunate Laikin
Jab Wo Rukhsat Howa Tab Yaad Aaya

Baith Kar Saaya-e-Gul Main Nasir
Hum Bohat Roye Wo Jab Yaad Aaya…!

Naye Kapre Badal Kar Jaon Kahan, Aur Baal Banaon Kis K Liye
Woh Shakhs To Shehar Hi Chor Giya Mein Bahir Jaon Kis Kay Liye

Jis Dhoop Ki Dil Mein Thandak Thi Woh Dhoop Ussi Kay Sath Gai
In Jaldi Balti Galion Mein Ab Khaak Uraon Kis Kay Liye

Wo Shehar Mein Tha To Uss Kay Liye Auron Sey Bhi Milna Parta Tha
Ab Aisey Waisay Logon Kay Mein Naaz Uthaon Kis Kay Liye

Ab Shehar Mein Uss Ka Badal Hi Nahin Koi, Waisa Jan-E-Ghazal Hi Nahin
Ewan-E-Ghazal Mein, Lafzon K Guldan Sajaon Kis Kay Liye

Muddat Sey Koi Aaya Na Giya Sunsaan Pari Hai Ghar Ki Fiza
In Khali Kamron Mein NASIR Ab Shamma Jalaon Kis Kay Liye

دل دھڑکنے کا سبب یاد آیا
وہ تری یاد تھی اب یاد آیا

آج مشکل تھا سنبھلنا اے دوست
تو مصیبت میں عجب یاد آیا

دن گزارا تھا بڑی مشکل سے
پھر ترا وعدۂ شب یاد آیا

تیرا بھولا ہوا پیمان وفا
مر رہیں گے اگر اب یاد آیا

پھر کئی لوگ نظر سے گزرے
پھر کوئی شہر طرب یاد آیا

حال دل ہم بھی سناتے لیکن
جب وہ رخصت ہوا تب یاد آیا

بیٹھ کر سایۂ گل میں ناصرؔ
ہم بہت روئے وہ جب یاد آیا

نئے کپڑے بدل کر جاؤں کہاں اور بال بناؤں کس کے لیے
وہ شخص تو شہر ہی چھوڑ گیا میں باہر جاؤں کس کے لیے

جس دھوپ کی دل میں ٹھنڈک تھی وہ دھوپ اسی کے ساتھ گئی
ان جلتی بلتی گلیوں میں اب خاک اڑاؤں کس کے لیے

وہ شہر میں تھا تو اس کے لیے اوروں سے بھی ملنا پڑتا تھا
اب ایسے ویسے لوگوں کے میں ناز اٹھاؤں کس کے لیے

اب شہر میں اس کا بدل ہی نہیں کوئی ویسا جان غزل ہی نہیں
ایوان غزل میں لفظوں کے گلدان سجاؤں کس کے لیے

مدت سے کوئی آیا نہ گیا سنسان پڑی ہے گھر کی فضا
ان خالی کمروں میں ناصرؔ اب شمع جلاؤں کس کے لیے