Mohsin Naqvi

Mohsin Naqvi (5 May 1947 − 15 January 1996) was a Pakistani poet, popular for his ghazals.

Azab-E-Deed Mein Aankhen Lahoo Lahoo Kar Ke
Mein Sharamsar Hua Teri Justajo Kr Ke

Khandar Ki Teh Say Barida-Badan Siron Ke Sawa
Mila Na Kuch Bhi Khazanon Ki Aarzo Kar Ke
 
Suna Hay Shehr Mein Zakhmi Dilon Ka Maila Hai
Chalen Gay Hm Bhi Magar Pairhan Rafo Kar Ke
 
Masafat-E-Shab-E-Hijran Kay Baad Bhaid Khula!
Hawa Dukhi Ha Charagon Ki Aabro Kar Ke
 
Zameen Ki Pyas Usi Kay Laho Ko Chat Gayi
Wo Khush Hoya Tha Smunder Ko Aab Jo Kar Ke
 
Yeh Kis Nay Ham Say Laho Ka Khiraj Pher Manga
Abhi To Soye Thay Maqtal Ko Surkharo Kar Ke
 
Ujar Rut Ko Gulabhi Banaye Rakhti Hein
Hamari Aankh Teri Deed Say Wazo Kar Ke
 
Koyi To Habs-E-Hawa Say Yeh Pochta Mohsin
Mila Hay Kya Usay Kalion Ko Be-Namo Kar Ke

Toggle ContentJis Ko Aksar Socha Tha Tanhai Main

Shaamil Hai Woh Shakhs Meri Ruswai Main

Mujh Se Mat Poocho Woh Chehra Kaisa Tha
Doob Gaya Main Aankhon Ki Gehraai Main

Jaagtay Rehnay Ki Kitni Targheebain Thein
Us Ki Boojhal Thakki Hui Angraai Main

Tujh Se Aankh Milaana Kitna Mushkil Hai
Warna Suraj Ghul Jayein Beenai Main

Pyaar Bhi Karta Hai Woh Beparwai Se
Naadaani Ka Rang Bhi Hai Daanai Main

Woh Ik Pal Ko Rota To Mehsoos Hua
Jaisay Beet Gaya Ik Saal Judai Main

Jaao Apnay Jaisay Log Talaash Karo
Kiya Paao Gay Mohsin Se Harjaayi Main

عذاب دید میں آنکھیں لہو لہو کر کے
میں شرمسار ہوا تیری جستجو کر کے
 
کھنڈر کی تہ سے بریدہ بدن سروں کے سوا
ملا نہ کچھ بھی خزانوں کی آرزو کر کے
 
سنا ہے شہر میں زخمی دلوں کا میلہ ہے
چلیں گے ہم بھی مگر پیرہن رفو کر کے
 
مسافت شب ہجراں کے بعد بھید کھلا
ہوا دکھی ہے چراغوں کی آبرو کر کے
 
زمیں کی پیاس اسی کے لہو کو چاٹ گئی
وہ خوش ہوا تھا سمندر کو آب جو کر کے
 
یہ کس نے ہم سے لہو کا خراج پھر مانگا
ابھی تو سوئے تھے مقتل کو سرخ رو کر کے
 
اجاڑ رت کو گلابی بنائے رکھتی ہے
ہماری آنکھ تری دید سے وضو کر کے
 
کوئی تو حبس ہوا سے یہ پوچھتا محسنؔ
ملا ہے کیا اسے کلیوں کو بے نمو کر کے

                               جس کو اکثر سوچا تھا تنہائی میں

شامل ہے وہ شخص میری رُسوائی میں
 
مجھ سے مت پوچھو وہ چہرا کیسا تھا
ڈوب گیا میں آنکھوں کی گہرائی میں
 
جاگتے رہنے کی کتنی ترغیبیں تھیں
اُس کی بوجھل تھکی ہوئی انگڑائی میں
 
تجھ سے آنکھ ملانا کتنا مشکل ہے
ورنہ سورج گُھل جائے بینائی میں
 
پیار بھی کرتا ہے وہ بے پروائی سے
نادانی کا رنگ بھی ہے دانائی میں
 
وہ ِاک پل کو رُوٹھا تو محسوس ہوا
جیسے بیت گیا اِک سال جدائی میں
 
جاؤ اپنے جیسے لوگ تلاش کرو
کیا پاؤ گے محسنؔ سے ہرجائی میں