Mirza Ghalib

Mirza Asadullah Baig Khan (27 December 1797 – 15 February 1869), also known by the pen names of Ghalib and Asad was an Indian poet

Har Ek Baat Pe Kehte Ho Tum Keh Tu Kya Hai
Tumhi Kaho Keh Yeh Andaaz-E-Guftgoo Kya Hai 

Na Shoule Mein Yeh Karishma Na Barq Mein Ye Ada
Koee Bataao Keh Woh Shokh-E-Tund_Khoo Kya Hai 

Yeh Rashk Hai Ki Wo Hota Hai Ham_sukhan Tumse
Wagarna Khauf-E-Bad_amozi-E-Adoo Kya Hai 

Chipak Raha Hai Badan Par Lahoo Se Pairaahan
Hamaray Jaib Ko Ab Hajat-E-Rafu Kya Hai 

Jala Hai Jism Jahaan Dil Bhi Jal Gaya Hoga
Kuredate Ho Jo Ab Rakh, Justju Kya Hai 

Ragon Mein Daurte Phirne Ke Ham Naheen Qaayal
Jab Aankh Hi Se Na Tapka To Phir Lahoo Kya Hai 

Woh Cheez Jiske Liye Hamko Ho Bahisht Azeez
Siwaay Baada-E-Gul_faam-E-Mushkaboo Kya Hai 

Piyoon Sharaab Agar Khum Bhee Dekh Loon Do Chaar
Yeh Sheesha-O-Qadah-O-Kooza-O-Suboo Kya Hai 

Rahee Na Taaqat-E-Guftaar, Aur Agar Ho Bhi
To Kis Ummeed Pe Kahiye Keh Aarzoo Kya Hai

Bana Hai Shaah Ka Musaahib, Phire Hai Itraata
Wagarna Shahar Mein ‘Ghalib’ Kei Aabroo Kya Hai

Ye Na Thi Hamari Qismat Ke Visaal-E-Yaar Hota
Agar Aur Jete Rehte Yehi Intezaar Hota

Tere Waade Per Jiye Ham Tu Jaan Jhot Jana
Keh Khushi Se Mar Na Jate Agar Aitbar Hota

Teri Nazuki Se Jana Ke Bandha Tha Ehad Boda
Kabhi Tu Na Tor Sakta Agar Ustwar Hota

Koi Mere Dil Se Poche Tere Teer Neem Kash Ko
Ye Khalash Kahan Se Hoti Jo Jigar Ke Paar Hota

Ye Kahan Ki Dosti Hai Ke Banay Hai Dost Naseh
Koi Chara Saaz Hota Koi Gham Gusar Hota

Rag Sang Se Tapakta Wo Lahu Ke Phir Na Thamta
Jisay Gham Samajh Rahy Ho Ye Agar Sharar Hota

Gham Agarche Jaan Gusal Hai, Pah Kahan Bachin Ka Dil Hai
Gham E Ishq Gar Na Hota, Game Rozgar Hota
 
Kahon Kis Se Mein Keh Kia Hai Shab Gham Buri Bala Hai
Mujhe Kya Bura Tha Marna Agar Aik Bar Hota
 
Hoye Mar Ke Ham Jo Ruswa Hoye Kun Na Gharaq Darya
Na Kabhi Janaza Uthta Na Kahin Mazaar Hota
 
Usay Kon Dekh Sakta Ke Yagana Hai Wo Yakta
Jo Doi Ko Boo Bhi Hoti Tu Kahin Do Chaar Hota
 
Ye Masael Taswuf Ye Tera Biyan Ghalib
Tujhe Ham Wali Samjhte Jo Na Bada Khwar Hota

Toggle ContentKoi Umeed Bar Nahi Aati

Koi Soorat Nazar Nahi Aati
 
Mout Ka Aik Din Muayyan Hai
Neend Kyion Raat Bhar Nahi Aati
 
Aage Ati Thi Haal-E- Dil Pe Hansi
Ab Kisi Baat Pe Nhi Aati
 
Janta Hun Sawab E Taa’at-O-Zohad
Paar Tabiyat Idhar Nahi Aati
 
Hai Kuch Aisi Hi Bat Jo Chup Hun
Warna Kia Bat Kar Nahi Aati
 
Kion Na Cheekhon Ke Yaad Karte Hain 
Meri Awaz Gar Nahi Aati
 
Daagh E Dil Gar Nazar Nahi Aati
Bus Bhi Aye Charah Gar Nahi Aati
 
Hum Wahan Hai Jahan Se Ham Koi Bhi
Kuch Hamari Khabar Nhi Aati
 
Marte Hain  Arzoo Mein Marne Ki 
Mout Ati Hai Par Nahi Aati
 
Kabah Kis Munh Se Jao Ge ‘Ghalib’
Sharam Tum Ko Magar Nhi Aati

Hazaaron Khwahishen Aisi Ke Har Khwahish Pe Dam Nikle

Buhat Niklay Mery Arman Lekin Phir Bhi Kam Niklay

 

Daray Kiyun Mera Qatil Kiya Rahay Ga Us Ki Garden Per

Wo Khoon Jo Chashm E Tar Say Umar Bhar Youn Dam Ba Dam Niklay

Nikalna Khuld Say Adam Ka Suntay Aaye Hain Lekin

Buhat Bay Abroo Ho Kar Teray Kochay Say Ham Niklay

 

Bharam Khul Jaye Zalim Tery Qamat Ki Darazi Ka

Agar Iss Turra Pur Pech O Kham Ka Pech O Kham Niklay

 

Magar Likhwaye Koi Iss Ko Khat Tu Ham Say Likhwaye

Hui Subah Aur Ghar Say Kan Per Rakh Kar Qalam Niklay

 

Hui Iss Daur Main Mansoob Mujh Say Bada Aashami

Phir Aaya Wo Zamana Jo Jahan Main Jam-E-Jaam Niklay

 

Hui Jin Say Tawaqa-E-Khastagi Ki Daad Panay Ki

Wo Haam Say Bhi Ziyada Khasta Tegh Sitam Niklay

 

Muhabbat Main Nahi Hai Farq Jeenay Aur Marnay Ka

Issi Ko Dekh Kar Jeetay Hain Jis Kafir Pay Daam Niklay

 

Kahan Mae-Khana Ka Darwaza Ghalib Aur Kahan Waaiz

Per Itna Jantay Hain Kal Wo Jata Tha Keh Ham Niklay

Ghar Jab Bana Liya Hai Tere Dar Par Kahe Baghair
Jaanega Ab Bhi Tu Na Mera Gar Kahe Baghair

Kahte Hain, Jab Rahi Na Mujhe Taaqat-E-Sukhan
Jaanun Kisi Ke Dil Ki Main Kyunkar Kahe Baghair

Kaam Us Se Aa Pada Hai Ki Jiska Jahaan Main
Lewe Na Koi Naam Sitamgar Kahe Baghair

Jii Main Hi Kuch Nahi Hai Hamaare Wagarna Ham
Sar Jaaye Ya Rahe Na Rahen Par Kahe Bagair

Chordunga Main Na Us But-E-Kaafir Ka Pujna
Chhode Na Khalq Go Mujhe Kaafir Kahe Baghair

Maqsad Hai Naaz-O-Gamza Wale Guftagu Main Kaam
Chalta Nahin Hai, Dashna-O-Khanjar Kahe Baghair

Har Chand Ho Mushahida-E-Haq Ki Guftagu
Banati Nahin Hai Baada-O-Saagar Kahe Baghair

Bahara Hoon Main To Chahiye Duna Ho Iltafaat
Sunta Nahin Hoon Baat Muqarrar Kahe Baghair

Ghalib Na Kar Huzur Main Tu Baar-Baar Arz
Zaahir Hai Tera Haal Sab Un Par Kahe Baghair

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تمہیں کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
وگرنہ خوفِ بد آموزیِ عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
ہمارے جَیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز
سوائے بادۂ گلفامِ مشک بو کیا ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا 
اگر اور جیتے رہتے، یہی انتظار ہوتا

تِرے وعدے پر جِئے ہم، تو یہ جان، جُھوٹ جانا
کہ خوشی سے مرنہ جاتے، اگراعتبار ہوتا
 
تِری نازُکی سے جانا کہ بندھا تھا عہدِ بُودا
کبھی تو نہ توڑ سکتا، اگراستوار ہوتا
 
کوئی میرے دل سے پوچھے ترے تیرِ نِیمکش کو
یہ خلِش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا
 
یہ کہاں کی دوستی ہےکہ، بنے ہیں دوست ناصح
کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا
 
رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہوکہ، پھر نہ تھمتا
جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا
 
غم اگرچہ جاں گُسل ہے، پہ کہاں بچیں کہ دل ہے
غمِ عشق گر نہ ہوتا، غمِ روزگار ہوتا
 
کہوں کس سے میں کہ کیا ہے، شبِ غم بُری بلا ہے
مجھے کیا بُرا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا
 
ہوئے مرکے ہم جو رُسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا 
نہ کبھی جنازہ اٹھتا، نہ کہیں مزار ہوتا
 
اسے کون دیکھ سکتا کہ یگانہ ہے وہ یکتا
جو دوئی کی بُو بھی ہوتی توکہیں دوچار ہوتا
 
یہ مسائلِ تصّوف، یہ ترا بیان، غالبؔ
تجھے ہم ولی سمجھتے، جو نہ بادہ خوار ہوتا

کوئی امّید بر نہیں آتی
کوئی صورت نظر نہیں آتی

موت کا ایک دین معیّن ہے
نیند کیوں رات بھر نہیں آتی

آگے آتی تھی حالِ دل پہ ہنسی
اب کسی بات پر نہیں آتی

جانتا ہوں ثوابِ طاعت و زہد
پر طبیعت ادھر نہیں آتی

ہے کچھ ایسی ہی بات جو چپ ہوں
ورنہ کیا بات کر نہیں آتی

کیوں نہ چیخوں کہ یاد کرتے ہیں
میری آواز گر نہیں آتی

داغِ دل گر نظر نہیں آتا
بُو بھی، اے چارہ گر، نہیں آتی
 
ہم وہاں ہیں جہاں سے، ہم کو بھی
کچھ ہماری خبر نہیں آتی
 
مرتے ہیں آرزو میں مرنے کی
موت آتی ہے پر نہیں آتی

کعبہ کس منہ سے جاؤ گے غالبؔ
شرم تم کو مگر نہیں آتی

ہزاروں خواہشیں ایسی کہ ہر خواہش پہ دم نکلے
بہت نکلے مرے ارمان لیکن پھر بھی کم نکلے

ڈرے کیوں میرا قاتل کیا رہے گا اُس کی گردن پر
وہ خوں، جو چشم تر سے عمر بھر یوں دم بہ دم نکلے؟

نکلنا خلد سے آدم کا سنتے آئے ہیں لیکن
بہت بے آبرُو ہو کر ترے کوچے سے ہم نکلے

بھرم کھل جائے ظالم تیرے قامت کی درازی کا
اگر اس طرۂ پرپیچ و خم کا پیچ و خم نکلے

مگر لکھوائے کوئی اُس کو خط تو ہم سے لکھوائے
ہوئی صبح اور گھر سے کان پر رکھ کر قلم نکلے

ہوئی اِس دور میں منسُوب مُجھ سے بادہ آشامی
پھر آیا وہ زمانہ جو جہاں میں جامِ جم نکلے

ہوئی جن سے توقع خستگی کی داد پانے کی
وہ ہم سے بھی زیادہ خستۂ تیغِ سِتم نکلے

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا
اُسی کو دیکھ کر جیتے ہیں، جس کافر پہ دم نکلے

کہاں میخانے کا دروازہ غالب! اور کہاں واعظ
پر اِتنا جانتے ہیں، کل وہ جاتا تھا کہ ہم نکلے

گھر جب بنا لیا ترے در پر کہے بغیر

جانے گا اب بھی تو نہ مرا گھر کہے بغیر
 
کہتے ہیں جب رہی نہ مجھے طاقت سخن
جانوں کسی کے دل کی میں کیونکر کہے بغیر
 
کام اس سے آ پڑا ہے کہ جس کا جہان میں
لیوے نہ کوئی نام ستم گر کہے بغیر
جی میں ہی کچھ نہیں ہے ہمارے وگرنہ ہم
 
سر جائے یا رہے نہ رہیں پر کہے بغیر
چھوڑوں گا میں نہ اس بت کافر کا پوجنا
چھوڑے نہ خلق گو مجھے کافر کہے بغیر
 
مقصد ہے ناز و غمزہ ولے گفتگو میں کام
چلتا نہیں ہے دشنہ و خنجر کہے بغیر
 
ہر چند ہو مشاہدۂ حق کی گفتگو
بنتی نہیں ہے بادہ و ساغر کہے بغیر
 
بہرا ہوں میں تو چاہیئے دونا ہو التفات
سنتا نہیں ہوں بات مکرر کہے بغیر
 
غالبؔ نہ کر حضور میں تو بار بار عرض
ظاہر ہے تیرا حال سب ان پر کہے بغیر