Mir Taqi Mir

Mir Muhammad Taqi, known as Mir Taqi Mir, was an Urdu poet of the 18th century Mughal India and one of the pioneers who gave shape to the Urdu language itself.

jis jagah daur-e-jam hota hai

vaan ye aajiz mudam hota hai

Ham to ik harf ke nahin mamnun

kaisa ḳhatt-o-payam hota hai

Tegh nakamon pe na har dam khinch

ik karishme men kaam hota hai

Puchh mat aah ashiqon ki ma-ash

roz un ka bhi shaam hota hai

Zaḳhm bin gham bin aur ghussa bin

apna khana haram hota hai

Shaiḳh ki si hi shakl hai shaitan

jis pe shab ahtelam hota hai

Qatl ko main kaha to uth bola

aaj kal subh-o-sham hotā hai

Aḳhir aunga na.ash par ab aah

ki ye ashiq tamām hota hai

‘Mir’ sahab bhi us ke haan the par

jaise koi ġhulam hota hai

Kya Haqiqat Kahun Keh Kya Hai Ishq
Haq-Shanason Ke Han KHUDA Hai Ishq
 
Dil Laga Ho To Ji Jahan Se Utha
Mout Ka Naam Pyar Ka Hai Ishq
 
Aur Tadbir Ko Nahi Kuch Dakhal
Ishq Ke Dard Ki Dawa Hai Ishq
 
Ishq Se Ja Nahi Koi Khali
Dil Se Le Arsh Tak Bhara Hai Ishq
 
Kohkan Kya Pahard KaTega
Parde Mein Zor-Azma Hai Ishq
 
Ishq Hai Ishq Karne Walon K
Kaisa Kaisa Baham Kiya Hai Ishq
 
Kon Maqsad Ko Ishq Bin Pahuncha
Aarzu Ishq Muddaa Hai Ishq
 
Mir Marna Pare Hai Khuban Par
Ishq Mat Kar Ki Bad Bala Hai Ishq
Faqeerana Aaye Sada Kar Chale
Mian Khush Raho Hum Dua Kar Chale
 
Jo Tujh Bin Na Jeene Ko Kehte Thay Hum
So Is Ehd Ko Ab Wafa Kar Chale
 
Koi Na Umeedana Karte Nigha
So Tum Hum Se Moonh Bhi Chupa Kar Chale
 
Bahut Aarzo Thi Gali Ki Teri
So Yahan Se Laho Mein Naha Kar Chale
 
Dekhai Diye Youn K Be Khud Kia
Humain Aap Se Bhi Juda Kar Chale
 
Jabeen Sajda Karte Hi Karte Gaye
Haq-E-Bandgi Hum Ada Kar Chale
 
Prastish Ki Yahan Taeen Ki Abhi But Tujhe
Nazar Mein Sabhon Ki Khuda Kar Chale
 
Gai Umar Dar Band-E-Fikr-E-Ghazal
So Is Fan Ko Aisa Bara Kar Chale
 
Kahein Kia Jo Pooche Koi Hum Se Mir
Jahan Mein Tum Aaye Thay Kia Kar Chale

Pata-Pata Buta-Buta Hal Hamara Jane Hai
Jane Na Jane Gul Hi Na Jane, Bag To Sara Jane Hai

Lagne Na De Bas Ho To Us K Gauhar-E-Gosh K Bale Tak
Us Ko Falak Chashm-E-Mai-O-Khor Ki Titli Ka Tara Jane Hai

Ashiq Sa To Sada Koi Aur Na Hoga Duniya Main
Ji K Zian Ko Ishq Main Us K Apna Wara Jane Hai

Charagari Bimari-E-Dil Ki Rasm-E-Shahar-E-Husn Nahin
Warna Dilbar-E-Nadan Bhi Is Dard Ka Chara Jane Hai

Kya Hi Shikar-Farebi Par Magrur Hai Wo Sayad Bacha
Tayar Urte Hawa Main Sare Apni Usra Jane Hai

Mehar-O-Wafa-O-Lutf-O-Inayat Ek Se Waqif In Main Nahin
Aur To Sab Kuch Tanz-O-Kanaya Ramz-O-Ishara Jane Hai

Kya Kya Fitne Sar Par Us K Lata Hai Mashuq Apna
Jis Bedil Betab-O-Tawan Ko Ishq Ka Mara Jane Hai

Rakhnon Se Diwar-E-Chaman K Munh Ko Le Hai Chipa Ya’ani
Un Surakhon K Tuk Rahne Ko Sau Ka Nazara Jane Hai

Tashna-E-Khun Hai Apna Kita ‘Mir’ Bhi Nadan Talkhikash
Damdar Ab-E-Teg Ko Us K Ab-E-Gawara Jane Hai

جس جگہ دور جام ہوتا ہے
واں یہ عاجز مدام ہوتا ہے

ہم تو اک حرف کے نہیں ممنون
کیسا خط و پیام ہوتا ہے

تیغ ناکاموں پہ نہ ہر دم کھینچ
اک کرشمے میں کام ہوتا ہے

پوچھ مت آہ عاشقوں کی معاش
روز ان کا بھی شام ہوتا ہے

زخم بن غم بن اور غصہ بن
اپنا کھانا حرام ہوتا ہے

شیخ کی سی ہی شکل ہے شیطان
جس پہ شب احتلام ہوتا ہے

قتل کو میں کہا تو اٹھ بولا
آج کل صبح و شام ہوتا ہے

آخر آؤں گا نعش پر اب آہ
کہ یہ عاشق تمام ہوتا ہے

میرؔ صاحب بھی اس کے ہاں تھے پر
جیسے کوئی غلام ہوتا ہے

کیا حقیقت کہوں کہ کیا ہے عشق
حق شناسوں کا ہاں خدا ہے عشق
 
دل لگا ہو تو جی جہاں سے اٹھا
موت کا نام پیار کا ہے عشق
 
اور تدبیر کو نہیں کچھ دخل
عشق کے درد کی دوا ہے عشق
 
عشق سے جا نہیں کوئی خالی
دل سے لے عرش تک بھرا ہے عشق
 
کوہ کن کیا پہاڑ کاٹے گا
پردے میں زور آزما ہے عشق
 
عشق ہے عشق کرنے والوں کو
کیسا کیسا بہم کیا ہے عشق
 
کون مقصد کو عشق بنِ پہنچا
آرزو عشق، مدّعا ہے عشق
 
میر مرنا پڑے ہے خوباں پر
عشق مت کر کہ بد بلا ہے عشق

فقیرانہ آئے صدا کرچلے
میاں خوش رہو ہم دعا کر چلے

جو تجھ بِن نہ جینے کو کہتے تھے ہم
سو اُس عہد کو اب وفا کر چلے

کوئی ناامیدانہ کرتے نگاہ
سو تم ہم سے منھ بھی چُھپا کر چلے

بہت آرزو تھی گلی کی تری
سو یاں سے لہو میں نہا کر چلے

دکھائی دیے یوں کہ بے خود کیا
ہمیں آپ سے بھی جدا کر چلے

جبیں سجدہ کرتے ہی کرتے گئی
حقِ بندگی ہم ادا کر چلے

پرستش کی یاں تک کہ اے بُت تجھے
نظر میں سبھوں کی خدا کر چلے

گئی عمر در بند فکر غزل
سو اس فن کو ایسا بڑا کر چلے
 
کہیں کیا جو پوچھے کوئی ہم سے میرؔ
جہاں میں تم آئے تھے کیا کر چلے

پتا پتا بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

جانے نہ جانے گل ہی نہ جانے باغ تو سارا جانے ہے

لگنے نہ دے بس ہو تو اس کے گوہر گوش کو بالے تک

اس کو فلک چشم مہ و خور کی پتلی کا تارا جانے ہے

عاشق سا تو سادہ کوئی اور نہ ہوگا دنیا میں

جی کے زیاں کو عشق میں اس کے اپنا وارا جانے ہے

عاشق سا تو سادہ کوئی اور نہ ہوگا دنیا میں

جی کے زیاں کو عشق میں اس کے اپنا وارا جانے ہے

کیا ہی شکار فریبی پر مغرور ہے وہ صیاد بچہ

طائر اڑتے ہوا میں سارے اپنے اساریٰ جانے ہے

مہر و وفا و لطف و عنایت ایک سے واقف ان میں نہیں

اور تو سب کچھ طنز و کنایہ رمز و اشارہ جانے ہے

کیا کیا فتنے سر پر اس کے لاتا ہے معشوق اپنا

جس بے دل بے تاب و تواں کو عشق کا مارا جانے ہے

رخنوں سے دیوار چمن کے منہ کو لے ہے چھپا یعنی

ان سوراخوں کے ٹک رہنے کو سو کا نظارہ جانے ہے

تشنۂ خوں ہے اپنا کتنا میرؔ بھی ناداں تلخی کش

دم دار آب تیغ کو اس کے آب گوارا جانے ہے