Jaun Elia

Syed Hussain Jaun Asghar Naqvi commonly known as Jaun Elia, 14 December 1931 – 8 November 2002), was an Urdu poet, philosopher, biographer, and scholar.

Kuch kahooN,Kuch sunooN,zara Thehro
Abhi zindoN meiN hooN, zara Thehro

Manzar-e-jashn-e-qatl-e-aam ko maiN
JhaaNk kar dekh looN, zara Thehro

Mat nikalna k doob jaao gey
KhooN hai bas,khooN hi khooN, zara Thehro

Soorat-e-haal apney baahar ki
Hai abhi tak zabooN, zara Thehro

Haath sey apney likh k naam apna
MaiN tumheiN souNp dooN, zara Thehro

Mera darwaaza toRney waalo !!
MaiN kaheeN chhup rahooN, zara Thehro…


Tum jab aaogi to khoya hua paogi mujhe,
Meri tanhaai mein khwabon ke siwa kuch bhi nahi


Mere kamre ko sajane ki tamanna hai tumhein,
Mere kamre mein kitaabon ke siwa kuch bhi nahi

In kitaabon ne bada zulm kiya hai mujh par,
In mein ek ramz hai jis ramz ka mara hua zehan


Mushday-e-ishrat-e-anjaam nahi pa sakta,
Zindagi mein kabhi araam pa nahi sakta…

ku-e-janan men aur kya mango

halat-e-hal yak sada mango

 

har-nafas tum yaqin-e-mun.im se

rizq apne guman ka māñgo

 

hai agar vo bahut hi dil nazdik

us se duuri ka silsila mango

 

dar-e-matlab hai kya talab-angez

kuchh nahin vaan so kuchh bhi ja mango

 

gosha-e-gir-e-ghubar-e-zat huun men

mujh men ho kar mira pata mango

 

munkiran-e-ḳhuda-e-baḳhshinda

us se to aur ik ḳhuda mango

 

us shikam-raqs-gar ke saa.il ho

naf-pyale ki tum ata mango

 

laakh janjal mangne men hain

kuchh na mango faqat dua mango

Saare Rishte Tabah Kar Aya
Dill-E-Barbaad Apne Ghar Aya
 
Akhirash Khoon Thukne Se Mian
Baat Main Teri Kya Assar Aya
 
Tha Khabar Main Ziyan Dill-O-Jaan Ka
Har Taraf Se Main Bekhabar Aya
 
Ab Yahan Hosh Main Kabhi Apne
Nahin Aaon Ga Main Agar Aya
 
Main Raha Umar Bhar Juda Khud Se
Yaad Main Khud Ko Umar Bhar Aya
 
Woh Jo Dil Naam Ka Tha Ek Nafar
Aaj Main Us Se Bhi Mukar Aya
 
Muddaton Baad Ghar Geya Tha Main
Jaate Hi Main Wahan Se Ddar Aya

Sharmindagi Hai Hum Ko Bahut Hum Mile Tumhein
Tum Sar-Ba-Sar Khushi The Magar Ghum Mile Tumhein

Mein Apne Aap Mein Na Mila Is Ka Ghum Nahi
Ghum To Ye Hai Ke Tum Bhi Bahut Kam Mile Tumhein

Hai Jo Humara Ek Hisaab Us Hisaab Se
Aati Hai Hum Ko Sharm Ke Paiham Mile Tumhein

Tum Ko Jahaan-E-Shauq-O-Tamanna Mein Kya Mila
Hum Bhi Mile To Darham O Barham Mile Tumhein

Ab Apne Taur Hi Mein Nahin Tum So Kaash Ke
Khud Mein Khud Apna Taur Koi Dam Mile Tumhein

Is Shahr-E-Heela-Ju Mein Jo Mahram Mile Mujhe
Fariyaad Jaan-E-Jaan Wahi Mahram Mile Tumhein

Deta Hun Tum Ko Khushki-E-Mizhgaa’n Ki Main Dua
Matlab Ye Hai Ke Daaman-E-Pur-Nam Mile Tumhein

Nain Un Mein Aaj Tak Kabhi Paaya Nahin Gaya
Jaanaa Jo Mere Shauq Ke Aalam Mile Tumhein

Tum Ne Humare Dil Mein Bahut Din Safar Kiya
Sharminda Hain Ke Us Mein Bahut Kham Mile Tumhein

Yoon Ho Ke Aur Hi Koi Hawwa Mile Mujhe
Ho Yoon Ke Aur Hi Koi Aadam Mile Tumhein

Hum Jee Rahe Hain Koi Bahana Kiye Baghair
Us Ke Baghair Us Ki Tamanna Kiye Baghair

Ambaar Us Ka Parda-E-Hurmat Bana Miyan
Diwar Tak Nahin Giri Parda Kiye Baghair

Yaran Wo Jo Hai Mera Masiha-E-Jaan-O-Dil
Be-Had Aziz Hai Mujhe Achchha Kiye Baghair

Main Bistar-E-KHayal Pe LeTa Hun Us Ke Pas
Subh-E-Azal Se Koi Taqaza Kiye Baghair

Us Ka Hai Jo Bhi Kuch Hai Mera Aur Main Magar
Wo Mujh Ko Chahiye Koi Sauda Kiye Baghair

Ye Zindagi Jo Hai Use Ma’ana Bhi Chahiye
Wada Hamein Qubul Hai Ifa Kiye Baghair

Ai Qatilon Ke Shahr Bas Itni Hi Arz Hai
Main Hun Na Qatl Koi Tamasha Kiye Baghair

Murshid Ke Jhoot Ki To Saza Be-Hisab Hai
Tum ChhoDiyo Na Shahr Ko Sahra Kiye Baghair

Un Aanganon Mein Kitna Sukun O Surur Tha
Aaraish-E-Nazar Teri Parwa Kiye Baghair

Yaran Khusha Ye Roz O Shab-E-Dil Ki Ab Hamein
Sab Kuchh Hai KHush-Gawar Gawara Kiye Baghair

Girya-Kunan Ki Fard Mein Apna Nahin Hai Nam
Hum Girya-Kun Azal Ke Hain Girya Kiye Baghair

Aakhir Hain Kaun Log Jo BaKHshe Hi Jaenge
Tareekh Ke Haram Se Tauba Kiye Baghair

Wo Sunni Bachcha Kaun Tha Jis Ki Jafa Ne Jaun
Shia Bana Diya Hamein Shia Kiye Baghair

Ab Tum Kabhi Na Aaoge Yani Kabhi Kabhi
Rukhsat Karo Mujhe Koi Wada Kiye Baghair

Abhi Farmaan Aaya Hai Wahaan Se
Ke Hatt Jaoon Main Apne Darmiyaan Se

Yahan Jo Hai Tanaffus Hi Mein Gum Hai
Parinde Ud Rahe Hain Shaakh-E-Jaan Se

Dareecha Baaz Hai Yaadon Ka Aur Main
Hawa Suntaa Hoon Pedon Ki Zubaan Se

Zamaana Tha Woh Dil Ki Zindagi Ka
Teri Furqat Ke Din Laaoon Kahaan Se

Tha Ab Tak Maa’rka Baahar Ka Dar-Pesh
Abhi To Ghar Bhi Jaana Hai Yahaan Se

Falaan Se thi Ghazal Behtar Falaan Ki
Falaan Ke Zakhm Achche They Falaan Ke

Khabar Kya Doon Mein Shahr-E-Raftagaan Ko
Koi Laute Bhi Shahar-E-Raftagaan Se

Yehi Anjaam Kya Tujh Ko Hawas Tha
Koi Poochhe To Meer-E-Dastaan Se

Abhi Farmaan Aaya Hai Wahaan Se
Ke Hatt Jaoon Main Apne Darmiyaan Se

Yahan Jo Hai Tanaffus Hi Mein Gum Hai
Parinde Ud Rahe Hain Shaakh-E-Jaan Se

Dareecha Baaz Hai Yaadon Ka Aur Main
Hawa Suntaa Hoon Pedon Ki Zubaan Se

Zamaana Tha Woh Dil Ki Zindagi Ka
Teri Furqat Ke Din Laaoon Kahaan Se

Tha Ab Tak Maa’rka Baahar Ka Dar-Pesh
Abhi To Ghar Bhi Jaana Hai Yahaan Se

Falaan Se thi Ghazal Behtar Falaan Ki
Falaan Ke Zakhm Achche They Falaan Ke

Khabar Kya Doon Mein Shahr-E-Raftagaan Ko
Koi Laute Bhi Shahar-E-Raftagaan Se

Yehi Anjaam Kya Tujh Ko Hawas Tha
Koi Poochhe To Meer-E-Dastaan Se

چھ کہوں، کچھ سنوں، ذرا ٹھہرو
ابھی زندوں میں ہوں، ذرا ٹھہرو

منظرِ جشنِ قتلِ عام کو میں
جھانک کر دیکھ لوں، ذرا ٹھہرو

مت نکلنا کہ ڈوب جاؤ گے
خوں ہے بس، خوں ہی خوں، ذرا ٹھہرو

صورتِ حال اپنے باہر کی
ہے ابھی تک زبوں، ذرا ٹھہرو

ہوتھ سے اپنے لکھ کے نام اپنا
میں تمہیں سونپ دوں، ذرا ٹھہرو

میرا دروازہ توڑنے والو
میں کہیں چھپ رہوں، ذرا ٹھہرو

تم جب آؤگی تو کھویا ہوا پاؤگی مجھے
میری تنہائی میں خوابوں کے سوا کچھ بھی نہیں

میرے کمرے کو سجانے کی تمنا ہے تمہیں
میرے کمرے میں کتابوں کے سوا کچھ بھی نہیں

ان کتابوں نے بڑا ظلم کیا ہے مجھ پر
ان میں اک رمز ہے جس رمز کا مارا ہوا ذہن

مژدۂ عشرت انجام نہیں پا سکتا
زندگی میں کبھی آرام نہیں پا سکت

کوئے جاناں میں اور کیا مانگو
حالت حال یک صدا مانگو

ہر نفس تم یقین منعم سے
رزق اپنے گمان کا مانگو

ہے اگر وہ بہت ہی دل نزدیک
اس سے دوری کا سلسلہ مانگو

در مطلب ہے کیا طلب انگیز
کچھ نہیں واں سو کچھ بھی جا مانگو

گوشہ گیر غبار ذات ہوں میں
مجھ میں ہو کر مرا پتا مانگو

منکران خدائے بخشندہ
اس سے تو اور اک خدا مانگو

اس شکم رقص گر کے سائل ہو
ناف پیالے کی تم عطا مانگو

لاکھ جنجال مانگنے میں ہیں
کچھ نہ مانگو فقط دعا مانگو
کوئے جاناں میں اور کیا مانگو
حالت حال یک صدا مانگو

ہر نفس تم یقین منعم سے
رزق اپنے گمان کا مانگو

ہے اگر وہ بہت ہی دل نزدیک
اس سے دوری کا سلسلہ مانگو

در مطلب ہے کیا طلب انگیز
کچھ نہیں واں سو کچھ بھی جا مانگو

گوشہ گیر غبار ذات ہوں میں
مجھ میں ہو کر مرا پتا مانگو

منکران خدائے بخشندہ
اس سے تو اور اک خدا مانگو

اس شکم رقص گر کے سائل ہو
ناف پیالے کی تم عطا مانگو

لاکھ جنجال مانگنے میں ہیں
کچھ نہ مانگو فقط دعا مانگو
سارے رشتے تباہ کر آیا
دل برباد اپنے گھر آیا
 
آخرش خون تھوکنے سے میاں
بات میں تیری کیا اثر آیا
 
تھا خبر میں زیاں دل و جاں کا
ہر طرف سے میں بے خبر آیا
 
اب یہاں ہوش میں کبھی اپنے
نہیں آؤں گا میں اگر آیا
 
میں رہا عمر بھر جدا خود سے
یاد میں خود کو عمر بھر آیا
 
وہ جو دل نام کا تھا ایک نفر
آج میں اس سے بھی مکر آیا
 
مدتوں بعد گھر گیا تھا میں
جاتے ہی میں وہاں سے ڈر آیا

شرمندگی ہے ہم کو بہت ہم مِلے تمہیں

تم سر بسر خوشی تھے مگر غم مِلے تمہیں

 

میں اپنے آپ میں نہ ملا اس کا غم نہیں

غم تو یہ ہے کہ تم بھی بہت کم مِلے تمہیں

 

ہے جو ہمارا ایک حساب اُس حساب سے

آتی ہے ہم کو شرم کہ پیہم مِلے تمہیں

 

تم کو جہان شوق و تمنا میں کیا ملا

ہم بھی ملے تو درہم و برہم مِلے تمہیں

 

اب اپنے طور ہی میں نہیں سو کاش کہ

خود میں خود اپنا طور کوئی دم مِلے تمہیں

 

اس شہر حیلہ جُو میں جو محرم مِلے مجھے

فریاد جانِ جاں وہی محرم مِلے تمہیں

 

دیتا ہوں تم کو خشکیِ مژگاں کی میں دعا

مطلب یہ ہے کہ دامن پرنم مِلے تمہیں

 

میں اُن میں آج تک کبھی پایا نہیں گیا

جاناں! جو میرے شوق کے عالم مِلے تمہیں

 

تم نے ہمارے دل میں بہت دن سفر کیا

شرمندہ ہیں کہ اُس میں بہت خم مِلے تمہیں

 

یوں ہو کہ اور ہی کوئی حوّا مِلے مجھے

ہو یوں کہ اور ہی کوئی آدم مِلے تمہیں

ہم جی رہے ہیں کوئی بہانہ کیے بغیر

اس کے بغیر اس کی تمنا کئے بغیر

 

انبار اس کا پردۂ حرمت بنا میاں

دیوار تک نہیں گری پردا کیے بغیر

 

یاراں وہ جو ہے میرا مسیحائے جان و دل

بے حد عزیز ہے مجھے اچھا کیے بغیر

 

میں بستر خیال پہ لیٹا ہوں اس کے پاس

صبح ازل سے کوئی تقاضا کیے بغیر
 
اس کا ہے جو بھی کچھ ہے مرا اور میں مگر
وہ مجھ کو چاہئے کوئی سودا کیے بغیر
 
یہ زندگی جو ہے اسے معنیٰ بھی چاہیے
وعدہ ہمیں قبول ہے ایفا کیے بغیر
 
اے قاتلوں کے شہر بس اتنی ہی عرض ہے
میں ہوں نہ قتل کوئی تماشا کیے بغیر
 
مرشد کے جھوٹ کی تو سزا بے حساب ہے
تم چھوڑیو نہ شہر کو صحرا کیے بغیر
 
ان آنگنوں میں کتنا سکون و سرور تھا
آرائش نظر تری پروا کیے بغیر
 
یاراں خوشا یہ روز و شب دل کہ اب ہمیں
سب کچھ ہے خوش گوار گوارا کیے بغیر
 
گریہ کناں کی فرد میں اپنا نہیں ہے نام
ہم گریہ کن ازل کے ہیں گریہ کیے بغیر
 
آخر ہیں کون لوگ جو بخشے ہی جائیں گے
تاریخ کے حرام سے توبہ کیے بغیر
 
وہ سنی بچہ کون تھا جس کی جفا نے جونؔ
شیعہ بنا دیا ہمیں شیعہ کیے بغیر
 
                                                       اب تم کبھی نہ آؤ گے یعنی کبھی کبھی
                                                      رخصت کرو مجھے کوئی وعدہ کیے بغیر
 

ابھی فرمان آیا ہے وہاں سے
کہ ہٹ جاؤں میں اپنے درمیاں سے

یہاں جو ہے تنفس ہی میں گم ہے
پرندے اڑ رہے ہیں شاخ جاں سے

دریچہ باز ہے یادوں کا اور میں
ہوا سنتا ہوں پیڑوں کی زباں سے

زمانہ تھا وہ دل کی زندگی کا
تری فرقت کے دن لاؤں کہاں سے

تھا اب تک معرکہ باہر کا درپیش
ابھی تو گھر بھی جانا ہے یہاں سے

فلاں سے تھی غزل بہتر فلاں کی
فلاں کے زخم اچھے تھے فلاں سے

خبر کیا دوں میں شہر رفتگاں کی
کوئی لوٹے بھی شہر رفتگاں سے

یہی انجام کیا تجھ کو ہوس تھا
کوئی پوچھے تو میر داستاں سے

ابھی فرمان آیا ہے وہاں سے
کہ ہٹ جاؤں میں اپنے درمیاں سے

یہاں جو ہے تنفس ہی میں گم ہے
پرندے اڑ رہے ہیں شاخ جاں سے

دریچہ باز ہے یادوں کا اور میں
ہوا سنتا ہوں پیڑوں کی زباں سے

زمانہ تھا وہ دل کی زندگی کا
تری فرقت کے دن لاؤں کہاں سے

تھا اب تک معرکہ باہر کا درپیش
ابھی تو گھر بھی جانا ہے یہاں سے

فلاں سے تھی غزل بہتر فلاں کی
فلاں کے زخم اچھے تھے فلاں سے

خبر کیا دوں میں شہر رفتگاں کی
کوئی لوٹے بھی شہر رفتگاں سے

یہی انجام کیا تجھ کو ہوس تھا
کوئی پوچھے تو میر داستاں سے