Ibn e Insha

Sher Muhammad Khan, better known by his pen name Ibn-e-Insha, was a Pakistani Urdu poet, humorist, travelogue writer and newspaper columnist. (June 15, 1927 – January 11, 1978)

Kal Chaudhvin Ki Raat Thi Shab Bhar Raha Charcha Tira
Kuchh Ne Kaha Ye Chand Hai Kuchh Ne Kaha Chehra Tira

Ham Bhi Vahin Maujud The Ham Se Bhi Sab Puchha Kiye
Ham Hans Diye Ham Chup Rahe Manzur Tha Parda Tira

Is Shahr Men Kis Se Milen Ham Se To Chhutin Mahfilen
Har Shakhs Tera Naam Le Har Shakhs Divana Tira

Kuche Ko Tere Chhod Kar Jogi Hi Ban Jaa.En Magar
Jangal Tire Parbat Tire Basti Tiri Sahra Tira

Ham Aur Rasm-E-Bandagi Ashuftagi Uftadgi
Ehsan Hai Kya Kya Tira Ai Husn-E-Be-Parva Tira

Do Ashk Jaane Kis Liye Palkon Pe Aa Kar Tik Ga.E
Altaf Ki Barish Tiri Ikram Ka Dariya Tira

Ai Be-Daregh O Be-Aman Ham Ne Kabhi Ki Hai Fughan
Ham Ko Tiri Vahshat Sahi Ham Ko Sahi Sauda Tira

Ham Par Ye Sakhti Ki Nazar Ham Hain Faqir-E-Rehguzar
Rasta Kabhi Roka Tira Daman Kabhi Thama Tira

Haan Haan Tiri Surat Hasin Lekin Tu Aisa Bhi Nahin
Ik Shakhs Ke Ash.Ar Se Shohra Hua Kya Kya Tira

Bedard Sunni Ho To Chal Kahta Hai Kya Achchhi Ghazal
Ashiq Tira Rusva Tira Sha.Ir Tira ‘Insha’ Tira

‘Insha’-ji uTho ab kouuch karo is shahr mein ji ko lagana kya

Vahshi ko sukun se kya matlab jogi ka nagar mein Thikana kya

 

Is dil ke darīda dāman ko dekho to sahī socho to sahī

jis jholī meñ sau chhed hue us jholī kā phailānā kyā

 

shab biitī chāñd bhī Duub chalā zanjīr paḌī darvāze meñ

kyuuñ der ga.e ghar aa.e ho sajnī se karoge bahānā kyā

 

Phir hijr kī lambī raat miyāñ sanjog kī to yahī ek ghadi

Jo dil mein hai lab par aane do sharmānā kyā ghabrana kya

 

Us roz jo un ko dekha hai ab ḳhvab ka aalam lagta hai

us roz jo un se baat huī vo baat bhi thi afsana kya

 

Us husn ke sache moti ko ham dekh saken par chhū na saken

jise dekh sakeñ par chhū na sakeñ vo daulat kyā vo ḳhazānā kyā

 

Us ko bhī jalā dukhte hue man ik sho.ala laal bhabūkā ban

yuuñ aañsū ban bah jaanā kyā yuuñ maaTī meñ mil jaanā kyā

 

jab shahr ke log na rastā deñ kyun ban meen na ja bisram kare

divanon kī si na baat kare to aur kare divana kya

Sham-E-Gham Ki Sahar Nahi Hoti
Ya Humain Ko Khabar Nahi Hoti
 
Hum Ne Sab Dukh Jahan Ke Dekhe Hain
Be Kali Is Qadar Nahi Hoti
 
Nala Youn Narsa Nahi Rehta
Aah Youn Beasar Nahi Hoti
 
Chand Hai Kehkashan Hai Tare Hain
Koi Shaye Nama Bar Nahi Hoti
 
Aik Jan Sooz-O-Na Murad Khalish
Is Taraf Hai Udhar Nahi Hoti
 
Dosto Ishq Hai Khata Lekin
Kia Khata Darguzar Nahi Hoti
 
Raat Aa Kar Guzar Bhi Jati Hai
Ek Humari Sahar Nahi Hoti
 
Beqarari Sahi Nahi Jati
Zindagi Mukhtasar Nahi Hoti
 
Aik Din Dekhne Ko Aa Jate
Ye Havas Umar Bhar Nahi Hoti
 
Husan Sab Ko Khuda Nahi Deta
Har Kisi Ki Nazar Nahi Hoti
 
Dil Payala Nahi Gadai Ka
Aashiqi Dar Ba Dar Nahi Hoti..

Farz Karo Hum Ahle Wafa Hon, Farz Karo Deewanay Hoon
Farz Karo Yeh Dono Batein Jhootee Hoon Afsanay Hoon

Farz Karo Yeh Jee Ki Bipta, Jee Say Jorh Sunai Ho
Farz Karo Abhi Or Ho Itni, Aadhi Hum Nay Chupai Ho

Farz Karo Tumhain Khush Kernay Kay Dhoondhay Humnay Bahany Hoon
Farz Karo Yeh Nain Tumharay Such Much Kay Maykhanay Hoon

Farz Karo Yeh Rog Ho Jhoota, Jhooti Peet Hamari Ho
Farz Karo Is Peet Kay Rog Main Sans Bhi Hum Per Bhari Ho

Farz Karo Yeh Jog Bajog Ka Hum Nay Dhong Rachaya Ho
Farz Karo Bus Yahi Haqeeqat Baqi Sub Kuch Maya Ho

کل چودھویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا ترا
کچھ نے کہا یہ چاند ہے کچھ نے کہا چہرا ترا

ہم بھی وہیں موجود تھے ہم سے بھی سب پوچھا کیے
ہم ہنس دئیے ہم چپ رہے منظور تھا پردہ ترا

اس شہر میں کس سے ملیں ہم سے تو چھوٹیں محفلیں
ہر شخص تیرا نام لے ہر شخص دیوانا ترا

کوچے کو تیرے چھوڑ کر جوگی ہی بن جائیں مگر
جنگل ترے پربت ترے بستی تری صحرا ترا

ہم اور رسم بندگی آشفتگی افتادگی
احسان ہے کیا کیا ترا اے حسن بے پروا ترا

دو اشک جانے کس لیے پلکوں پہ آ کر ٹک گئے
الطاف کی بارش تری اکرام کا دریا ترا

اے بے دریغ و بے اماں ہم نے کبھی کی ہے فغاں
ہم کو تری وحشت سہی ہم کو سہی سودا ترا

ہم پر یہ سختی کی نظر ہم ہیں فقیر رہ گزر
رستہ کبھی روکا ترا دامن کبھی تھاما ترا

ہاں ہاں تری صورت حسیں لیکن تو ایسا بھی نہیں
اک شخص کے اشعار سے شہرہ ہوا کیا کیا ترا

بے درد سننی ہو تو چل کہتا ہے کیا اچھی غزل
عاشق ترا رسوا ترا شاعر ترا انشاؔ ترا

انشاؔ جی اٹھو اب کوچ کرو اس شہر میں جی کو لگانا کیا
وحشی کو سکوں سے کیا مطلب جوگی کا نگر میں ٹھکانا کیا

اس دل کے دریدہ دامن کو دیکھو تو سہی سوچو تو سہی
جس جھولی میں سو چھید ہوئے اس جھولی کا پھیلانا کیا

شب بیتی چاند بھی ڈوب چلا زنجیر پڑی دروازے میں
کیوں دیر گئے گھر آئے ہو سجنی سے کرو گے بہانا کیا

پھر ہجر کی لمبی رات میاں سنجوگ کی تو یہی ایک گھڑی
جو دل میں ہے لب پر آنے دو شرمانا کیا گھبرانا کیا

اس روز جو ان کو دیکھا ہے اب خواب کا عالم لگتا ہے
اس روز جو ان سے بات ہوئی وہ بات بھی تھی افسانا کیا

اس حسن کے سچے موتی کو ہم دیکھ سکیں پر چھو نہ سکیں
جسے دیکھ سکیں پر چھو نہ سکیں وہ دولت کیا وہ خزانا کیا

اس کو بھی جلا دکھتے ہوئے من اک شعلہ لال بھبوکا بن
یوں آنسو بن بہہ جانا کیا یوں ماٹی میں مل جانا کیا

جب شہر کے لوگ نہ رستا دیں کیوں بن میں نہ جا بسرام کرے
دیوانوں کی سی نہ بات کرے تو اور کرے دیوانا کیا

شام غم کی سحر نہیں ہوتی

یا ہمیں کو خبر نہیں ہوتی

ہم نے سب دکھ جہاں کے دیکھے ہیں

بیکلی اس قدر نہیں ہوتی

نالہ یوں نارسا نہیں رہتا

آہ یوں بے اثر نہیں ہوتی

چاند ہے کہکشاں ہے تارے ہیں

کوئی شے نامہ بر نہیں ہوتی

ایک جاں سوز و نامراد خلش

اس طرف ہے ادھر نہیں ہوتی

دوستو عشق ہے خطا لیکن

کیا خطا درگزر نہیں ہوتی

رات آ کر گزر بھی جاتی ہے

اک ہماری سحر نہیں ہوتی

بے قراری سہی نہیں جاتی

زندگی مختصر نہیں ہوتی

ایک دن دیکھنے کو آ جاتے

یہ ہوس عمر بھر نہیں ہوتی

حسن سب کو خدا نہیں دیتا

ہر کسی کی نظر نہیں ہوتی

دل پیالہ نہیں گدائی کا

عاشقی در بہ در نہیں ہوتی

فرض کرو ہم اہلِ وفا ہوں، فرض کرو دیوانے ہوں
فرض کرو یہ دونوں باتیں جھوٹی ہوں افسانے ہوں

فرض کرو یہ جی کی بپتا جی سے جوڑ سنائی ہو
فرض کرو ابھی اور ہو اتنی،آدھی ہم نے چھپائی ہو

فرض کرو تمھیں خوش کرنے کے ڈھونڈے ہم نے بہانے ہوں
فرض کرو یہ نین تمھارے سچ مچ کے میخانے ہوں

فرض کرو یہ روگ ہو جھوٹا، جھوٹی پیت ہماری ہو
فرض کرو اس پیت کے روگ میں سانس بھی ہم پہ بھاری ہو

فرض کرو یہ جوگ بجوگ کا ہم نے ڈھونگ رچایا ہو
فرض کرو بس یہی حقیقت، باقی سب کچھ مایا ہو