Gulzar

Parveen Shakir  (24 November 1952 – 26 December 1994) was a Pakistani poet, teacher and a civil servant of the Government of Pakistan.

Khushbu Jaise Log Mile Afsane Mein
Ek Purana Khat Khola Anjaane Mein

Sham Ke Saye Baalishton Se Nape Hain
Chaand Ne Kitni Der Laga Di Aane Mein

Raat Guzarte Shayad Thoda Waqt Lage
Dhoop Undelo Thodi Si Paimane Mein

Jaane Kis Ka Zikar Hai Is Afsane Mein
Dard Maze Leta Hai Jo Dohrane Mein

Dil Par Dastak Dene Kaun Aa Nikla Hai
Kis Ki Aahat Sunta Hun Virane Mein

Hum Is Mod Se Uth Kar Agle Mord Chale
Un Ko Shayad Umar Lagegi Aane Mein

Sehma Sehma Dara Sa Rehta Hai

Janey Kiun G Bhara Sa Rehta Hai

 

Kaaee See Jam Gaee Hai Aankhon Par

Sara Manzar Hara Sa Rehta Hai

 

Ek Pal Dekh Loon Tou Uthta Hon

Jal Gaya Ghar , Zara Sa Rehta Hai

 

Sar Mein Junmbish Khayal Ki Bhi Nahi

Zaanwou’n Par Dhara  Sa Rehta Hai . ..

خوشبو جیسے لوگ ملے افسانے میں
ایک پرانا خط کھولا انجانے میں

شام کے سائے بالشتوں سے ناپے ہیں
چاند نے کتنی دیر لگا دی آنے میں

رات گزرتے شاید تھوڑا وقت لگے
دھوپ انڈیلو تھوڑی سی پیمانے میں

جانے کس کا ذکر ہے اس افسانے میں
درد مزے لیتا ہے جو دہرانے میں

دل پر دستک دینے کون آ نکلا ہے
کس کی آہٹ سنتا ہوں ویرانے میں

ہم اس موڑ سے اٹھ کر اگلے موڑ چلے
ان کو شاید عمر لگے گی آنے میں

سہما سہما ڈرا سا رہتا ہے

جانے کیوں جی بھراسارہتا ہے

 

کائی سی جم گئی ہے آنکھوں پر

سارا منظر ہرا  سا رہتا  ہے

 

ایک پل دیکھ لوں تواُٹھتا ہوں

جل  گی ا گھر،  ذرا سارہتا ہے

 

سر میں جنبش خیال کی بھی نہیں

 .. .. زانوؤں  پر  دھرا  سارہتا  ہے