Faiz Ahmad Faiz

Faiz Ahmad Faiz (13 February 1911 – 20 November 1984) was a Pakistani poet, and author in Urdu and Punjabi language. He was one of the most celebrated writers of the Urdu language in Pakistan.

Naseeb Aazmane Ke Din Aa Rahe Hai
Qareeb Un Ke Aane Ke Din Aa Rahe Hai

Jo Dil Se Kaha, Jo Dil Se Suna Hai
Sab Un Ko Sunaane Ke Din Aa Rahe Hai

Abhi Se Dil O Jaan Sar-E-Raah Rakh Do
Ke Luttne Lutaane Ke Din Aa Rahe Hai

Tapakne Lagi Un Nigaaho Se Masti
Nigaahai Churaane Ke Din Aa Rahe Hai

Saba Phir Hamain Poochti Phir Rahi Hai
Chaman Ko Sajaane Ke Din Aa Rahe Hai

Chalo Faiz Phir Se Kahin Dil Lagain
Suna Hai Thikaane Ke Din Aa Rahe Hai

Tumhari Yaad Ke Jab Zakhm Bharne Lagte Hain
Kisi Bahane Tumhein Yaad Karne Lagte Hain
 
Hadis-E-Yar Ke Unwan Nikharne Lagte Hain
To Har Harim Mein Gesu Sanwarne Lagte Hain
 
Har Ajnabi Hamein Mahram Dikhai Deta Hai
Jo Ab Bhi Teri Gali Se Guzarne Lagte Hain
 
Saba Se Karte Hain Ghurbat-Nasib Zikr-E-Watan
To Chashm-E-Subh Mein Aansu Ubharne Lagte Hain
 
Wo Jab Bhi Karte Hain Is Nutq O Lab Kiiy Bakha-Gari
Faza Mein Aur Bhi Naghme Bikharne Lagte Hain
 
Dar-E-Qafas Pe Andhere Ki Mohr Lagti Hai
Tou Faiz Dil Mein Sitare Utarne Lagte Hain

Baat Bas Se Nikal Chali Hai
Dil Ki Haalat Sambhal Chali Hai

Ab Junun Had Se Badh Chala Hai
Ab Tabiat Bahal Chali Hai

Ashk Khunab Ho Chale Hain
Gham Ki Rangat Badal Chali Hai

Ya Yunhi Bujh Rahi Hain Shamen
Ya Shab-E-Hijr Tal Chali Hai

Lakh Paigham Ho Gae Hain
Jab Saba Ek Pal Chali Hai

Jao Ab So Raho Sitaro
Dard Ki Raat Dhal Chali Hai

Dil Mein Ab Yun Tere Bhoole Huye Gham Aate Hain
Jaise Bichde Hue Ka’abe Mein Sanam Aate Hain

Ek Ek Karke Hue Jaate Hai Tare Roshan
Meri Manzil Ki Taraf Tere Qadam Aate Hain

Raqs-E-Mai Tez Karo Saaz Ki Lae Tez Karo
Su-E-Maikhaana Safiraan-E-Haram Aate Hain

Kuch Hamin Ko Nahi Ahsan Uthane Ka Dimagh
Woh Tou Jab Aate Hain, Maail-Ba-Karam Aate Hain

Aur Kuch Deir Na Guzre, Shab-E-Furqat Se Kaho
Dil Bhi Kam Dukhta Hai Woh Yaad Bhi Kam Aate Hain

نصیب آزمانے کے دن آرہے ہیں
قریب ان کے آنے کے دن آرہے ہیں

و دل سے کہا ہے، جو دل سے سنا ہے
سب اُن کو سنانے کے دن آرہے ہیں

ابھی سے دل و جاں سرِ راہ رکھ دو
کہ لٹنے لٹانے کے دن آرہے ہیں

ٹپکنے لگی اُن نگاہوں سے مستی
نگاہیں چرانے کے دن آرہے ہیں

صبا پھر ہمیں پوچھتی پھر رہی ہے
چمن کو سجانے کے دن آرہے ہیں

چلو فیض پھر سے کہیں دل لگائیں
سنا ہے ٹھکانے کے دن آرہے ہیں

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں
کسی بہانے تمہیں یاد کرنے لگتے ہیں
 
حدیث یار کے عنواں نکھرنے لگتے ہیں
تو ہر حریم میں گیسو سنورنے لگتے ہیں
 
ہر اجنبی ہمیں محرم دکھائی دیتا ہے
جو اب بھی تیری گلی سے گزرنے لگتے ہیں
 
صبا سے کرتے ہیں غربت نصیب ذکر وطن
تو چشم صبح میں آنسو ابھرنے لگتے ہیں
 
وہ جب بھی کرتے ہیں اس نطق و لب کی بخیہ گری
فضا میں اور بھی نغمے بکھرنے لگتے ہیں
 
در قفس پہ اندھیرے کی مہر لگتی ہے
تو فیضؔ دل میں ستارے اترنے لگتے ہیں
بات بس سے نکل چلی ہے
دل کی حالت سنبھل چلی ہے
 
اب جنوں حد سے بڑھ چلا ہے
اب طبیعت بہل چلی ہے
 
اشک خوناب ہو چلے ہیں
غم کی رنگت بدل چلی ہے
 
یا یوں ہی بجھ رہی ہیں شمعیں
یا شب ہجر ٹل چلی ہے
 
لاکھ پیغام ہو گئے ہیں
جب صبا ایک پل چلی ہے
 
جاؤ اب سو رہو ستارو
درد کی رات ڈھل چلی ہے

دل میں اب یوں ترے بھولے ہوئے غم آتے ہیں
جیسے بچھڑے ہوئے کعبے میں صنم آتے ہیں

ایک اک کرکے ہوئے جاتے ہیں تارے روشن
میری منزل کی طرف تیرے قدم آتے ہیں

رقصِ مے تیز کرو ، ساز کی لے تیز کرو
سوئے مے خانہ سفیرانِ حرم آتے ہیں

کچھ ہمیں کو نہیں احسان اُٹھانے کا دماغ
وہ تو جب آتے ہیں ، مائل بہ کرم آتے ہیں

اور کچھ دیر نہ گزرے شبِ فرقت سے کہو
دل بھی کم دُکھتا ہے، وہ یاد بھی کم آتے ہی