Fahmida Riaz

Parveen Shakir  (24 November 1952 – 26 December 1994) was a Pakistani poet, teacher and a civil servant of the Government of Pakistan.

Ab so jao

aur apne hath ko mere hath mein rahne do

tum chand se mathe wale ho

aur achchhi qismat rakhte ho

bachche ki sau bholi surat

ab tak zid karne ki aadat

kuchh khoi khoi si baaten

kuchh sine mein chubhti yaaden

ab inhen bhula do so jao

aur apne hath ko mere hath mein rahne do

so jao tum shahzade ho

aur kitne Dheron pyare ho

achchha to koi aur bhi thi

achchha phir baat kahan nikli

kuchh aur bhi yaaden bachpan ki

kuchh apne ghar ke aangan ki

sab batla do phir so jao

aur apne hath ko mere hath mein rahne do

ye ThanDi sans hawaon ki

ye jhilmil karti KHamoshi

ye Dhalti raat sitaron ki

bite na kabhi tum so jao

aur apne hath ko mere hath mein rahne do

اب سو جاؤ
اور اپنے ہاتھ کو میرے ہاتھ میں رہنے دو
تم چاند سے ماتھے والے ہو
اور اچھی قسمت رکھتے ہو
بچے کی سو بھولی صورت
اب تک ضد کرنے کی عادت
کچھ کھوئی کھوئی سی باتیں
کچھ سینے میں چبھتی یادیں
اب انہیں بھلا دو سو جاؤ

اور اپنے ہاتھ کو میرے ہاتھ میں رہنے دو
سو جاؤ تم شہزادے ہو
اور کتنے ڈھیروں پیارے ہو
اچھا تو کوئی اور بھی تھی
اچھا پھر بات کہاں نکلی
کچھ اور بھی یادیں بچپن کی
کچھ اپنے گھر کے آنگن کی
سب بتلا دو پھر سو جاؤ

اور اپنے ہاتھ کو میرے ہاتھ میں رہنے دو
یہ ٹھنڈی سانس ہواؤں کی
یہ جھلمل کرتی خاموشی
یہ ڈھلتی رات ستاروں کی
بیتے نہ کبھی تم سو جاؤ
اور اپنے ہاتھ کو میرے ہاتھ میں رہنے دو