Bashir Badr

Bashir Badr (born Syed Muhammad Bashir; 15 February 1935) is an Indian poet. He was teaching Urdu in Aligarh Muslim University.

Na ji bhar ke dekha na kuchh baat ki

Bari aarzu thi mulaqat ki

Ujalon ki pariyan nahane lagin

Nadi gungunai ḳhayalat ki

Main chup tha to chalti hava ruk gai

Zaban sab samajhte hain jazbat ki

Muqaddar miri chashm-e-pur-ab ka

Barasti hui raat barsat ki

Kai saal se kuchh ḳhabar hi nahin

Kahan din guzara kahan raat ki..

Yeh Chandni Bhi Jin Ko Choote Huye Darti Hai,
Duniya Inhi Phoolon Ko Pairon Se Masalti Hai
 
Shohrat Ki Bulandi Bhi Pal Bhar Ka Tamasha Hai
Jiss Daal Pe Bethe Ho Woh Toot Bhi Sakti Hai
 
Lohaan Mein Chingaari Jese Koi Rakh Jaye
Yu’n Yaad Teri Shab Bhar Seene Mein Sulagti Hai
 
Ajata Hai Khud Kheench Kar Dil Seene Se Patrri Per
Jab Raat Ki Sarhad Se Ik Rail Guzarti Hai
 
Aansu Kabhi Palkon Per Ta-Dair Nahin Rukte
Urr Jate Hain Yeh Panchi Jab Shaakh Lachakti Hai
 
Khush Rang Parindon Ke Laut Aaney Ke Din Aye
Bichrre Huye Milte Hain Jab Baraf Pighalti Hai
نہ جی بھر کے دیکھا نہ کچھ بات کی
بڑی آرزو تھی ملاقات کی
 
اُجالوں کی پریاں نہانے لگیں
ندی گُنگنائی خیالات کی
 
میں چُپ تھا تو چلتی ہوا رُک گئی
زباں سب سمجھتے ہیں جذبات کی
 
مقدر مری چشمِ پُر آب کا
برستی ہوئی رات برسات کی
 
کئی سال سے کچھ خبر ہی نہیں
کہاں دن گزارا کہاں رات کی
یہ چاندنی بھی جن کو چھوتے ہوئے ڈرتی ہے
دنیا انہی پھولوں کو پیروں سے مسلتی ہے
 
شہرت کی بلندی بھی پل بھر کا تماشہ ہے
جس ڈال پہ بیٹھے ہو وہ ٹوٹ سکتی ہے
 
لوبان میں چنگاری جیسے کوئی رکھ جائے
یوں یاد تری شب پھر سینے میں سلگتی ہے
 
آ جاتا ہے خود کھینچ کر دل سینے سے پٹڑی پر
جب رات کی سرحد سے اک ریل گزرتی ہے
 
آنسو کھبی پلکوں پر تادیر نہیں رکتے
اڑ جاتے ہیں یہ پنچھی جب شاخ لچکتی ہے
 
خوش رنگ پرندوں کے لوٹ آنے کے دن آئے
بچھڑے ہوئے ملتے ہیں جب برف پگھلتی ہے