Anwar Masood

Anwar Masood; born 8 November 1935 is a Pakistani poet known for his comic poetry. However, his works include other genres as well. He writes in Punjabi, Urdu and Persian languages. His poetry is known for the unique use of everyday, commonplace phrases and wording that is instantly relatable for masses in the region.

Us hasin ke ḳhayal men rahna

Alam-e-be-misal men rahna

Kab talak ruuh ke parinde ka

Ek mitti ke jaal men rahna

Ab yahi naghmagi ki nudrat hai

Sur men rahna na taal men rahna

Be-asar kar gaya hai vaa-iz ko

Har ghadi qīl-o-qal men rahna

‘Anvar’ us ne na main ne chhoda hai

Apne apne ḳhayal men rahna.

Raat aa-i hai balaon se riha-i degi

Ab na divar na zanjir dikha-i degi

Vaqt guzra hai pa mausam nahin badla yaaro

Aisi gardish hai zamin ḳhud bhī duha-i degi

Ye dhundlaka sa jo hai is ko ghanimat jaano

Dekhna phir koī sūrat na sujha-i degi

Dil jo TuTega to ik tarfa charaghan hoga

Kitne a-inon men vo shakl dikha-i degi

Saath ke ghar meñ tirā shor bapa hai ‘Anvar’

Koi aa-ega to dastak na suna-i degi

اس حسیں کے خیال میں رہنا
عالم بے مثال میں رہنا

کب تلک روح کے پرندے کا
ایک مٹی کے جال میں رہنا

اب یہی نغمگی کی ندرت ہے
سر میں رہنا نہ تال میں رہنا

بے اثر کر گیا ہے واعظ کو
ہر گھڑی قیل و قال میں رہنا

انورؔ اس نے نہ میں نے چھوڑا ہے
اپنے اپنے خیال میں رہنا

رات آئی ہے بلاؤں سے رہائی دے گی
اب نہ دیوار نہ زنجیر دکھائی دے گی

وقت گزرا ہے پہ موسم نہیں بدلا یارو
ایسی گردش ہے زمیں خود بھی دہائی دے گی

یہ دھندلکا سا جو ہے اس کو غنیمت جانو
دیکھنا پھر کوئی صورت نہ سجھائی دے گی

دل جو ٹوٹے گا تو اک طرفہ چراغاں ہوگا
کتنے آئینوں میں وہ شکل دکھائی دے گی

ساتھ کے گھر میں ترا شور بپا ہے انورؔ
کوئی آئے گا تو دستک نہ سنائی دے گی