Amjad Islam Amjad

Amjad Islam Amjad (born 4 August 1944) is an Urdu poet, drama writer and lyricist from Pakistan. The author of more than 40 books in a career spanning 50 years.

Ab ke safar kuchh aur thaa, aur hii kuchh saarab the
Dasht-e-talab meN jaa ba jaa, saNg-e-giraan-e-Khwaab the

Hashr k din ka ghulghula shehar ke baam-o-dar meN thaa
Nigle hue sawaal the, ugle hue jawaab the

Ab ke baras bahaar ki rut bhii thii inetzaar ki
LehjoN mein sail-e-dard thaa, aankhoN mein izteraab the

KhwaaboN ke chaand Dhal gaye, taaroN ke dam nikal gaye
Phuulon ke haath jal gaye, kaise yeh aaftaab the

Sail ki rehguzar hue, hont na phir bhi tar hue
Kaisi ajiib piyaas thii, kaise ajiib sahaab the

Umr isii tazaad mein, rizq-e-ghubaar ho gayii
Jism thaa aur azaab the, aankheN thiiN aur Khwaab the

Subah huii to shehar ke shor mein yuun bikhar gaye
Jaise voh aadmii na the, naqsh-o-nigaar-e-aab the

Aankhon meN Khuun bhar gaye raston mein hii bikhar gaye
Aane se qabl mar gaye, aise bhii inqilaab the

Saath voh ek raat ka, chashm-e-zadan ki baat thaa
Phir na vo iltefaat thaa, phir na vo ijtinaab the

Rabt ki baat aur hai, zabt ki baat aur hai
Yeh jo fishaar-e-khaak hai, is meN kabhii gulaab the

Abr baras ke khul gaye, jii ke ghubaar dhal gaye
Aankh meN ruunuma hue, shahr jo zair-e-aab the

Dard ki rehguzar mein, chalte to kis khumaar mein
Chashm k be-nigaah thii, hont k be-khitaab the

Jo tum nay thaan hi li hai
humaray dil se niklo gay
too itna jaan lo Jaanan…
samandar samnay ho ga ager sahil se niklo gay
sitaray jin ki aankhon nay, humain ik sath dekha tha
gawahi denay aain gay
puranay kagzoon ki balkooni se bohat se lafz jhankain gay
tumhain wapis bulain gay
kai waday, fasadi qarz khawahoon ki tarah tumhain rastay main rookain gay
tumhain daman se pakrain gay
tumhari jaan khain gay
chupa ker kis tarah chera
bhari mehfil se niklo gay
zara phir soch lo janan
nikal too jao gay shayad
magar mushkil se niklo gay

Aankhon ka rang, baat ka lehja badal gaya
Wo shakhs ek shaam mein kitna badal gaya
 
Kuch din to mera aks raha aaii’ne pe naqsh
Phir yun huaa, ke khud mera chehra badal gaya
 
Jab apne apne haal pe hum tum na reh sake
To kyaa hua jo ham se zammana badal gaya
 
Qadmon talay jo reit bichhi thi wo chal pari
Us ne churaya haath to sehra badal gaya
 
Koi bhi cheez apni jagah par nahin rahi
Jaate hi ek shakhs ke, kya kya badal gaya
 
Ik sarkhashi ki mauj ne kaisa kiya kamaal
Wo be-niyaaz sara ka sara badal gaya
 
Uth kar chala gaya koi waqfe ke darmiyaan
Pardaa uthaa to saara tamasha badal gayaa
 
Hairat se saare lafz usey dekhte rahe
Baaton mein apni baat ko kaisa badal gaya
 
Kehne ko ek sehn mein deevaar hi bani
Is ghar ki fazaa, makaan ka naqsha badal gaya
 
Shaayad wafa kay khel se uktaa gayaa tha wo
Manzil kay paas aa ke jo rasta badal gaya
 
Qaayem kisi bhi haal pe duniya nahin rahi
Aitabaar kho gayi kabhi sapna badal gaya
 
Manzar ka rang asl mein saaya tha rang ka
Jis ne use jidhar say bhi dekha, badal gaya
 
Andar ke mausmoun ki khabar us ko ho gayi
Us nau-bahaar-e-naaz ka chehra badal gaya
 
Aankhon mein jitne ashk the jugnu se ban gaye
Wo muskuraya aur meri duniya badal gaya
 
Apni galii mein apna hi ghar dhundte hain log
Amjad yeh kaun shehr ka naqsha badal gaya!

اب کے سفر ہی اور تھا‘ اور ہی کچھ سراب تھے
دشتِ طلب میں جا بجا‘ سنگِ گرانِ خواب تھے

حشر کے دن کا غلغلہ‘ شہر کے بام و دَر میں تھا
نگلے ہوئے سوال تھے‘ اُگلے ہوئے جواب تھے

اب کے برس بہار کی‘ رُت بھی تھی اِنتظار کی
لہجوں میں سیلِ درد تھا‘ آنکھوں میں اضطراب تھے

خوابوں کے چاند ڈھل گئے تاروں کے دم نکل گئے
پھولوں کے ہاتھ جل گئے‘ کیسے یہ آفتاب تھے

سیل کی رہگزر ہوئے‘ ہونٹ نہ پھر بھی تر ہوئے
کیسی عجیب پیاس تھی‘ کیسے عجب سحاب تھے

عمر اسی تضاد میں‘ رزقِ غبار ہو گئی
جسم تھا اور عذاب تھے‘ آنکھیں تھیں اور خواب تھے

صبح ہوئی تو شہر کے‘ شور میں یوں بِکھر گئے
جیسے وہ آدمی نہ تھے‘ نقش و نگارِ آب تھے

آنکھوں میں خون بھر گئے‘ رستوں میں ہی بِکھر گئے
آنے سے قبل مر گئے‘ ایسے بھی انقلاب تھے

ساتھ وہ ایک رات کا‘ چشم زدن کی بات تھا
پھر نہ وہ التفات تھا‘ پھر نہ وہ اجتناب تھے

ربط کی بات اور ہے‘ ضبط کی بات اور ہے
یہ جو فشارِ خاک ہے‘ اِس میں کبھی گلاب تھے

اَبر برس کے کھُل گئے‘ جی کے غبار دُھل گئے
آنکھ میںرُونما ہوئے‘ شہر جو زیرِ آب تھے

درد کی رہگزار میں‘ چلتے تو کِس خمار میں
چشم کہ بے نگاہ تھی‘ ہونٹ کہ بے خطاب تھے

جو تم نے ٹھان ہي لي ہے
ہمارے دل سے نکلو گے
تو اتنا جان لو پيارے
سمندر سامنے ہوگا اگر ساحل سے نکلو گے
ستارے جن کي آنکھوں نے
ہميں اک ساتھ ديکھا تھا
گواہي دينے آئيں گے
پرانےکاغذوں کي بالکوني سے بہت لفظ جھانکيں گے
تمہيں واپس بلائيں گے
کئي وعدے فسادي قرض خواہوں کي طرح رستے ميں
روکيں گے تمھيں دامن سے پکڑیں گے
تمہاري جان کھائيں گے
چھپا کر کس طرح چہرہ بھري محفل سے نکلو گے
ذرا پھر سوچ لو جاناں
نکل تو جائو گے شايد
مگر مشکل سے نکلو گے

آنکھوں کا رنگ، بات کا لہجہ بدل گیا
وہ شخص ایک شام میں کتنا بدل گیا

کُچھ دن تو میرا عکس رہا آئینے پہ نقش
پھریوں ہُوا کہ خُود مِرا چہرا بدل گیا

جب اپنے اپنے حال پہ ہم تم نہ رہ سکے
تو کیا ہوا جو ہم سے زمانہ بدل گیا

کوئی بھی چیز اپنی جگہ پر نہیں رہی
جاتے ہی ایک شخص کے کیا کیا بدل گیا!

اِک سر خوشی کی موج نے کیسا کیا کمال!
وہ بے نیاز، سارے کا سارا بدل گیا

اٹھ کر چلا گیا کوئی وقفے کے درمیاں
پردہ اُٹھا تو سارا تماشا بدل گیا

حیرت سے سارے لفظ اُسے دیکھتے رہے
باتوں میں اپنی بات کو کیسا بدل گیا

شاید وفا کے کھیل سے اُکتا گیا تھا وہ
منزل کے پاس آکے جو رستہ بدل گیا

قائم کسی بھی حال پہ دُنیا نہیں رہی
تعبیرکھو گئی، کبھی سَپنا بدل گیا

منظر کا رنگ اصل میں سایا تھا رنگ کا
جس نے اُسے جدھر سے بھی دیکھا بدل گیا

آنکھوں میں جتنے اشک تھے جگنو سے بن گئے
وہ مُسکرایا اور مری دُنیا بدل گیا

اپنی گلی میں اپنا ہی گھر ڈھونڈتے ہیں لوگ
امجد یہ کو ن شہر کا نقشہ بدل گیا