Ahmed Faraz

Syed Ahmad Shah better known by his pen name Ahmed Faraz, (12 January 1931 – 25 August 2008) was poet, scriptwriter and chairman of Pakistan Academy of Letters. During his lifetime, he criticised military rule and coup d’état in the country and was displaced by the military dictators. He was awarded the Sitara-i-Imtiaz and Hilal-e-Imtiaz. On 25 August 2008, he died in Islamabad.

Jo ghair the vo isi baat par hamare hue

Ki ham se dost bahut be-ḳhabar hamare hue

 

Kise ḳhabar vo mohabbat thi ya raqabat thi

Bahut se log tujhe dekh kar hamare hue

 

Ab ik hujum-e-shikasta-dilan hai saath apne

Jinhen koi na mila ham-safar hamare hue

 

Kisi ne gham to kisi ne mizaj-e-ġham baḳhsha

sab apni apni jagah charagar hamare hue

 

Bujha ke taaq ki sham-en na dekh taron ko

Isī junun men to barbad ghar hamare hue

 

 Vo e’timad kahāñ se ‘faraz’ la.enge

kisi ko chhod ke vo ab agar hamare hue..

Tha koi ya nahin tha jo kuchh tha

Dil ke andar kahin tha jo kuchh tha

 

Tu bhi apne se ḳhush-guman tha bahut

Main bhi apne ta-iin tha jo kuchh tha

 

Shahr-e-ḳhuban men vo vafa-dushman

Khubsurat-tarin tha jo kuchh tha

 

Durd-e-mai thi ki talḳhī-e-hasti

Jaam men tah-nashin tha jo kuchh tha

 

Chhod aa-e abas dar-e-janan

Yaar sab kuchh vahīñ thā jo kuchh tha

Ishq iksir tha dilon ke liye

Zahar tha angbin tha jo kuchh tha

 

Hosh aaya to ab khula hai ‘faraz’

Main to kuchh bhi nahin tha jo kuchh tha

Tujhse Bichhad Ke Hum Bhi Muqaddar Ke Ho Gaye
Phir Jo Bhi Dar Mila Hai Usi Dar Ke Ho Gaye

Phir Yun Hua Ke Ghhair Ko Dil Se Lagaa Liya
Andar Wo Nafraten Thin Ke Baahar Ke Ho Gaye

Kya Log The Ke Jaan Se Badh Kar Aziz The
Ab Dil Se Mahw Naam Bhi Aksar Ke Ho Gaye

Ay Yaad-E-Yaar Tujh Se Karen Kyaa Shikaayaten
Ay Dard-E-Hijr Hum Bhi To Patthar Ke Ho Gaye

Samjha Rahe The Mujh Ko Sabhi Nasehaan-E-Shehar
Phir Raftaa Raftaa Khud Usi Kaafir Ke Ho Gaye

Ab Ke Na Intizaar Karen Chaaragar Ka Hum
Ab Ke Gaye To Koo-E-Sitamgar Ke Ho Gaye

Rote Ho Ek Jazira-E-Jaan Ko Faraz Tum
Dekho To Kitne Shahr Samandar Ke Ho Gaye

جو غیر تھے وہ اسی بات پر ہمارے ہوئے
کہ ہم سے دوست بہت بے خبر ہمارے ہوئے

کسے خبر وہ محبت تھی یا رقابت تھی
بہت سے لوگ تجھے دیکھ کر ہمارے ہوئے

اب اک ہجوم شکستہ دلاں ہے ساتھ اپنے
جنہیں کوئی نہ ملا ہم سفر ہمارے ہوئے

کسی نے غم تو کسی نے مزاج غم بخشا
سب اپنی اپنی جگہ چارہ گر ہمارے ہوئے

بجھا کے طاق کی شمعیں نہ دیکھ تاروں کو
اسی جنوں میں تو برباد گھر ہمارے ہوئے

وہ اعتماد کہاں سے فرازؔ لائیں گے
کسی کو چھوڑ کے وہ اب اگر ہمارے ہوئے

تھا کوئی یا نہیں تھا جو کچھ تھا
دل کے اندر کہیں تھا جو کچھ تھا

تو بھی اپنے سے خوش گماں تھا بہت
میں بھی اپنے تئیں تھا جو کچھ تھا

شہر خوباں میں وہ وفا دشمن
خوب صورت تریں تھا جو کچھ تھا

درد مے تھی کہ تلخیٔ ہستی
جام میں تہہ نشیں تھا جو کچھ تھا

چھوڑ آئے عبث در جاناں
یار سب کچھ وہیں تھا جو کچھ تھا

عشق اکسیر تھا دلوں کے لئے
زہر تھا انگبیں تھا جو کچھ تھا

ہوش آیا تو اب کھلا ہے فرازؔ
میں تو کچھ بھی نہیں تھا جو کچھ تھا

تجھ سے بچھڑ کے ہم بھی مقدر کے ہو گئے

پھر جو بھی در ملا ہے اسی در کے ہو گئے
 
پھر یوں ہوا کہ غیر کو دل سے لگا لیا
اندر وہ نفرتیں تھیں کہ باہر کے ہو گئے
 
کیا لوگ تھے کہ جان سے بڑھ کر عزیز تھے
اب دل سے محو نام بھی اکثر کے ہو گئے
 
اے یاد یار تجھ سے کریں کیا شکایتیں
اے درد ہجر ہم بھی تو پتھر کے ہو گئے
 
سمجھا رہے تھے مجھ کو سبھی ناصحان شہر
پھر رفتہ رفتہ خود اسی کافر کے ہو گئے
 
اب کے نہ انتظار کریں چارہ گر کہ ہم
اب کے گئے تو کوئے ستم گر کے ہو گئے
 
روتے ہو اک جزیرۂ جاں کو فرازؔ تم
دیکھو تو کتنے شہر سمندر کے ہو