Abdul Hameed Adam

Abdul Hameed Adam (1910–1981) was a Pakistani writer and poet. Abdul Hameed was born in Talwandi Musa, a village in Gujranwala in Punjab, Pakistan).

Aankhon se teri zulf ka saya nahin jata
Aaram jo dekha hai bhulaya nahin jata

Allah-re nadan jawani ki umangen!
Jaise koi bazar sajaya nahin jata

Aankhon se pilate raho saghar mein na dalo
Ab hum se koi jam uthaya nahin jata

Bole koi hans kar to chhidak dete hain jaan bhi
Lekin koi ruthe to manaya nahin jata

Jis tar ko chheden wahi fariyaad-ba-lab hai
Ab hum se ‘adam’ saz bajaya nahin jata

Agarche roz-e-azal bhi yahi andhera tha

Teri jabin se nikalta hua sawera tha

 

Pahunch saka na main bar-waqt apni manzil par

Ki raste mein mujhe rahbaron ne ghera tha

 

Teri nigah ne thoDi si raushni kar di

Wagarna arsa-e-kaunain mein andhera tha

 

Ye kaenat aur itni sharab-aluda

Kisi ne apna KHumar-e-nazar bikhera tha

 

Sitare karte hain ab us gali ke gird tawaf

Jahan ‘adam’ mere mahbub ka basera tha

آنکھوں سے تری زلف کا سایہ نہیں جاتا
آرام جو دیکھا ہے بھلایا نہیں جاتا

اللہ رے نادان جوانی کی امنگیں!
جیسے کوئی بازار سجایا نہیں جاتا

آنکھوں سے پلاتے رہو ساغر میں نہ ڈالو
اب ہم سے کوئی جام اٹھایا نہیں جاتا

بولے کوئی ہنس کر تو چھڑک دیتے ہیں جاں بھی
لیکن کوئی روٹھے تو منایا نہیں جاتا

جس تار کو چھیڑیں وہی فریاد بہ لب ہے
اب ہم سے عدمؔ ساز بجایا نہیں جاتا

اگرچہ روز ازل بھی یہی اندھیرا تھا
تری جبیں سے نکلتا ہوا سویرا تھا

پہنچ سکا نہ میں بر وقت اپنی منزل پر
کہ راستے میں مجھے رہبروں نے گھیرا تھا

تری نگاہ نے تھوڑی سی روشنی کر دی
وگرنہ عرصۂ کونین میں اندھیرا تھا

یہ کائنات اور اتنی شراب آلودہ
کسی نے اپنا خمار نظر بکھیرا تھا

ستارے کرتے ہیں اب اس گلی کے گرد طواف
جہاں عدمؔ مرے محبوب کا بسیرا تھا